کراچی: اجازت ملتے ہی خواتین موٹر سائیکل پر سفر کرنے لگیں

کراچی سمیت سندھ بھر میں خواتین کو موٹر سائیکل پر مشروط سفر کی اجازت ملتے ہی شہر قائد میں صبح سویرے ہی خواتین اپنے والد، شوہر، بھائی، بیٹے کے ساتھ موٹر سائیکل پر سفر کرنے لگیں۔

سندھ حکومت کی جانب سے ہدایت کی گئی ہے کہ خواتین سے باہر نکلنے کا جواز پوچھ کر انہیں جانے دیا جائے گا

اجازت ملنے کے بعد آج شہر میں صبح سویرے خواتین موٹرسائیکل پر سفر کرتی نظر آئیں، جبکہ کچھ افراد اور پولیس اہلکار بھی ڈبل سواری کی خلاف ورزی کرتے دکھائی دیئے۔

گزشتہ شب ’جیو نیوز‘ سے گفتگو کرتے ہوئے سندھ کےصوبائی وزیر ناصر حسین شاہ کا کہنا تھا کہ خواتین کو موٹر سائیکل کی ڈبل سواری کی اجازت دی جا رہی ہے۔


انہوں نے بتایا کہ وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاھ نے ڈبل سواری کرنے والوں کے ساتھ پولیس کے رویّے کا نوٹس لیا ہے تاہم پولیس کو موٹر سائیکل پر سوار خواتین کو مناسب جواز بتانے پر سفر کی اجازت دینے کی ہدایت کر دی گئی ہے۔

ناصر شاہ نے مزید کہا کہ ڈبل سواری کرنے والے دوسرے افراد کو اتار کر موٹر سائیکل سوار کو جانے کی اجازت دینے کی بھی ہدایت کی گئی ہے۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ پولیس کو ہدایت کی گئی ہے کہ اگر کوئی ڈبل سواری کرتا ہے تو اسے ایک گھنٹے کے لیے روک لیا جائے اور اس کے بعد جانے دیا جائے، حکومت نہیں چاہتی کہ عوام کے ساتھ زیادتی ہو۔

صوبائی وزیر نے سندھ کے عوام سے اپیل کی ہے کہ گھروں سے بغیر اشد ضرورت کے نہ نکلیں۔

یہ بھی پڑھیئے: پاکستان، کورونا مریض 9739، ہلاکتیں 209

واضح رہے کہ 3 روز قبل صوبے بھر میں موٹر سائیکل کی ہر قسم کی ڈبل سواری ختم کر دی گئی تھی۔

ڈبل سواری کا استثنیٰ خواتین، بچوں، بزرگ شہریوں کے ساتھ ساتھ صحافیوں، پولیس اور دیگر قانون نافذ کرنے والے اداروں کے اہلکاروں کے لیے بھی ختم کر دیا گیا تھا۔

وزیرِ اعلیٰ سندھ کی جانب سے آج سے صرف خواتین کو پولیس کی جانب سے پوچھے جانے پر جواز بتا کر موٹر سائیکل کی ڈبل سواری کی اجازت مل گئی ہے