بھٹو نے بے نظیر کا نام اپنی بہن کے نام پر رکھا تھا ۔بھٹو فیملی کا اصل گاؤں پیربخش بھٹو تھا

سابق وزیراعظم ذوالفقار علی بھٹو نے اپنی صاحبزادی بےنظیر بھٹو کا نام اپنی مرحومہ بہن کے نام پر رکھا تھا بھٹو فیملی کا اصل گاؤں پیر بخش بھٹو تھا ۔بھٹو خاندان پر ایک تحقیقی میڈیا رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ بھٹو کی والدہ ستاروں کے حال پر یقین رکھتی تھیں انہوں نے بھٹو کا مستقبل معلوم کرنے کے لیے ممبئی کے ایک منجھے ہوئے برہمن کو بلایا تھا اس برہمن نے بھٹو کی والدہ کو بتایا تھا کہ بھٹو کو زندگی میں بہت عروج ملے گا اور اقتدار ان کے حصے میں آئے گا لیکن پچاس سال کی عمر کے بعد ان کے ساتھ کیا ہوگا اس حوالے سے برہمن نجو می نے کچھ بتانے سے انکار کر دیا تھا اور کہا تھا اس کے آگے خاموشی طاری ہو جائے گی اس نجومی کی باتیں سچ ثابت ہوئی بھٹو کو زبردست عروج ملا شہرت ملی انہیں اقتدار ملا اور پھر 51 سال کی عمر میں وہ پھانسی چڑھا دیئے گئے ۔
سوشل میڈیا رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ بھٹو اپنے والد سر شاہنواز بھٹو کی دوسری بیگم خورشید بیگم کی اولاد تھے خورشید بیگم پہلے ایک ہندو رقاصہ لکھی بائی کے نام سے مشہور تھی ۔سر شاہنواز بھٹو کی پہلی اہلیہ سے مونا اور بے نظیر دو بیٹیاں پیدا ہوئیں بےنظیر بچپن میں انفلوئنزہ کی بیماری سے انتقال کر گئیں ۔ایک بیٹا سکندر سات سال کی عمر میں مر گیا ۔دوسرا بیٹا امداد علی بھٹو 39 سال کی عمر میں وفات پائی ۔ذوالفقار علی بھٹو اپنے والد شاہنواز بھٹو کی ساری جائیداد کے اکلوتے وارث بنے ۔
رپورٹ کے مطابق بھٹو خاندان کا اس لگاؤ پیربخش بھٹو تھا دودا بخش بھٹو کے بیٹے خدابخش بھٹو کی اپنے باپ سے ناچاقی ہوگئی تھی جس کے بعد اپنا گاؤں چھوڑ کر نیا گاؤں بسایا جسے گھڑی خدا بخش کے نام سے شہرت ملی