سندھ حکومت- کراچی کی 11 یونین کونسل کو سیل کرنے کے فیصلے میں ترمیم- صرف ان علاقوں کو سیل کیا جائے گا جہاں کرونا وائرس کے کیسز کی تعداد زیادہ ہے

) سندھ حکومت نے کراچی کی 11 یونین کونسل کو سیل کرنے کے فیصلے میں ترمیم کردی۔ تفصیلات کے مطابق سندھ حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ اب یونین کونسلز کے صرف ان علاقوں کو سیل کیا جائے گا جہاں کرونا وائرس کے کیسز کی تعداد زیادہ ہے۔ دوسری جانب ڈپٹی کمشنر کی ہدایت پر رینجرز اور پولیس کو بھاری نفری نے 11 یونین کونسلز کے مختلف علاقوں کو سیل کر دیا ہے۔
شہری گھروں میں ہی رہے گے۔ بتایا گیا ہے کہ 11 یونین کونسلز سے 150 سے زائد کیسز رپورٹ ہوئے ہیں ۔ جس کے بعد سے فیصلہ کیا گیا ہے کہ وہ علاقے جہاں کرونا وائرس کے زیادہ کیسز رپورٹ ہوئے ہیں، ان کے داخلی اور خارجی راستے بند کئے جا رہے ہیں۔ دپٹی کشمنرایسٹ کراچی کا کہنا ہے کہ ان علاقوں میں تمام شہریوں کو ٹیسٹ کیا جائے گا۔

صورتحال بہتر ہوئی تو پابندی اٹھائی جائے گی۔

ان کا کہنا تھا کہ سامنے آنے والے 150 مریضوں کو ان کے گھروں میں رکھنے کی کوشش کی جائے گی تاہم ایسا ممکن نہ ہوتا قرنطینہ سنٹر میں منتقل کر دیا جائے گا۔ یہ بات بھی قابل غور رہے سیل ہونے والے یوسیز میں یو سی 6 گیلانی ریلوے، ڈالمیا یوسی 7، جمال کالونی یوسی 8، گلشن 2 یوسی 9، پہلوان گوٹھ یوسی 10، گلزار ہجری یوسی 12 ، صفورا یو سی 13 ، فیصل کینٹ کا علاقہ اور منظور کالونی یو سی 2 ،جیکب لائن یو سی 9 جبکہ جمشید کوارٹر یو سی کے علاقے شامل ہیں ۔
واضح رہے کہ اس سے قبل ترجمان حکومت کے مرتضیٰ وہاب نے نجی چینل سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ کراچی کی 11 یونین کونسلز کو مکمل طور پر سیل کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے، ان علاقوں میں نقل و حرکت کی اجازت نہیں ہو گی۔ صرف ادویات اور کھانے کی اشیاء لانے کی اجازت دی جائے گی۔ تاہم اب سندھ حکومت کی جانب سے فیصلہ کیا گیا ہے کہ کراچی کی 11 یونین کونسلز کے صرف ان علاقوں کو سیل کیا جائے گا جہاں کرونا وائرس کیسز کی تعداد بہت زیادہ ہے