کراچی فش ہاربر سے کرونا کے وسیع پیمانے پر پھیلاؤ کے خطرات بڑھ گئے، احتیاطی تدابیر کی دھجیاں اڑا دی گئیں

کراچی فش ہاربر سے کرونا کے وائرس کے خطرناک حد تک پھیلاؤ کا خطرہ پیدا ہوگیا ہے کیونکہ وہاں کی انتظامیہ کی غفلت لاپرواہی نااہلی اور لالچ کی وجہ سے تمام حفاظتی تدابیر کی دھجیاں اڑا دی گئیں کسی قسم کے سماجی فاصلے کی سرکاری پالیسی کی پابندی نہیں کی گئی اور کھلے عام سینکڑوں کی تعداد میں مچھلی کے خریدوفروخت کے کام کو جاری رکھا گیا جس کی ویڈیوز اور تصاویر سامنے آگئیں ہیں اور انتہائی خوفناک صورتحال پیش کر رہی ہیں ماہرین کا کہنا ہے کہ انتہائی غفلت اور لاپرواہی برتی گئی ہے وفاقی اور صوبائی حکومتوں اور متعلقہ اداروں نے زبردست کوتاہی برتی ہے اور یہ سوالات اٹھائے جارہے ہیں کہ مسجدوں میں نماز جمعہ کی ادائیگی کے حوالے سے تو احتیاط برتیں گی لیکن فشریز میں مچھلی کے کاروبار کے حوالے سے وفاقی اور صوبائی حکومتوں نے اپنی ذمہ داری کیوں پوری نہیں کی پولیس اور قانون نافذ کرنے والے ادارے خاموش تماشائی کیوں بنے رہے اتنی بڑی تعداد میں لوگوں کی زندگی کو خطرے میں ڈالی گئی کیا کرو نا اورفشریز کی کوئی دوستی ہوگئی ہے یا کوئی معاہدہ ہو چکا ہے کہ ایک رونا یہاں نہیں آئے گا ۔کیا مچھلی کھانے والے یا مچھلی کا کاروبار کرنے والے اتنے سخت لوگ ہیں کے کرونا ان کا کچھ نہیں بگاڑ سکتا ماہرین کا کہناہے کہ فطری اس پر جس قسم کی لاپرواہی اور غفلت برتی گئی ہے اللہ خیر کرے ورنہ یہاں سے کرونا پھیلا تو نہ جانے کتنے سینکڑوں ہزاروں لوگوں تک پہنچے گا حکومت کو ہوش کے ناخن لینے چاہئیں اور فشریز کے حوالے سے فوری طور پر سخت اقدامات پر عملدرآمد یقینی بنانا چاہیے۔

 

 

 

 

https://youtu.be/lOlYT1qhDvs