سکینڈل کے بعد صرف محکمے بدلے‘ عوام 73 سالہ چنگل میں پھنسے رہیں گے ?

 امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ اتنے بڑے سکینڈل کے بعد بھی حکومت نے صرف وزراء کے محکموں کو تبدیل کیا ہے۔ یہ چند چاول ہیں جنہیں دیکھ کر پتہ چل گیا ہے کہ حکومت کی ساری دیگ ہی ایسی ہے۔ پاکستان کا المیہ ہے کہ لوگ پیسے کے بل بوتے پر سیاست میں آتے ہیں اور پھر سیاست کو پیسہ بنانے کے لیے استعمال کرتے ہیں۔ اب اصل فیصلہ پاکستان کے عوام نے کرنا ہے کہ کیا وہ 73سال سے اقتدار پر مسلط پارٹیوں کے چنگل میں ہی پھنسے رہیں گے۔ وزیراعظم سمیت وزراء اور مشیروں کو مستحقین میں امداد کی تقسیم کا آغاز اپنی دولت سے کرنا چاہیے اور کم ازکم اپنی10فیصد دولت وزیراعظم کے کرونا فنڈ میں جمع کرانی چاہیے۔ وزیراعظم اور وزراء کو اس نیکی کے کام آغاز اپنی ذات سے کرنا چاہیے۔ بہتر ہوتا وزیراعظم اپنی تیس مارچ کی تقریر کے موقع پر ہی اپنی طرف سے عطیے کا اعلان کر دیتے۔ اب ملک وقوم کے لیے قربانی کا وقت ہے۔ 70سال سے اقتدار میں رہنے والے جاگیرداروں، وڈیروں اور سرمایہ داروں کو اس سے پیچھے نہیں رہنا چاہئے۔ سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ وزیراعظم کو سب سے پہلے اپنی پارٹی کے ارکان صوبائی و قومی اسمبلی اور سینٹ سے کرونا فنڈ میں بڑھ چڑھ کر حصہ ڈالنے پر آمادہ کرنا چاہیے۔