لاک ڈاﺅن کے نفاذ سے عوام کی زندگیوں کو محفوظ بنایا جا رہا ہے، وزیر اطلاعات سندھ

افسوس ہے کہ ہمارے وزیرعظم کرونا معاملے پر سستی شہرت حاصل کرنا چاہتے ہیں ۔صوبائی وزیر ناصر شاہ
14اپریل کے بعد اگر لاک ڈاﺅن میں نرمی کی گئی تو اس کا آغاز مساجد سے کریں گے،وزیر بلدیات
کراچی: سندھ کے وزیر اطلاعات ، مذہبی امور ، بلدیات ، جنگلات اور ہاﺅسنگ ٹاﺅن پلاننگ سید ناصر حسین شاہ نے 12 بجے سے 3 بجے تک کے لاک ڈاﺅن کے دوران عوام کے تعاون پر ان کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ ہم بہت جلد عوام کے تعاون سے کورونا جیسی وباءکوشکست دے دیں گے 14اپریل کے بعد اگر لاک ڈاﺅن میں نرمی کی گئی تو اس کا آغاز مساجد اور عبادت گاہوں سے کریں گے تاہم بزرگ اور بچے مساجد میں آنے سے گریز کریں عوام نے اپنے گھروں میں رہ کر لاک ڈاﺅن کی مکمل پابندی کی جس پر سندھ حکومت ان کا تہہ دل سے شکریہ ادا کرتی ہے ۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے اپنے ایک بیان میں کیا۔سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ موجودہ حالات میں سماجی فاصلے اور اپنے گھروں میں رہنا انتہائی ضروری ہے نماز جمعہ اور مذہبی اجتماعات پر پابندی کا فیصلہ انتہائی تکلیف دہ عمل ہے تاہم عوام کی بہتری اور ان کی صحت کی حفاظت کی خاطر حکومت نے سخت اور تکلیف دہ اقدامات اٹھائے ہیں اس لئے ہم نے مختلف مکاتب فکر کے علماءکرام سے مشاورت کی اور علما و مشائخ نے حکومت سندھ کے ان اقدامات کو درست قرار دیا ہے۔ کیونکہ حکومت سندھ اپنے لوگوں کی جانوں کو محفوظ بنانے کی خاطر کوشاں ہے انہوں نے کہا کہ ہم ایک مشکل دور سے گذر رہے ہیں۔

اس لیے صوبے کے تمام شہری قانون کی پاسداری کو ذمہ داری اور فرض سمجھ کر ادا کریں لاک ڈاون کے نفاذ سے عوام کی زندگیوں کو محفوظ بنایا جا رہا ہے اور نماز جمعہ کے اجتماعات پر پابندی بھی انسانی جانوں کے تحفظ کے لئے لگائی گئی ہے ہم اپنے لوگوں کی زندگیاں بچانا چاہتے ہیں لیکن افسوس کہ ہمارے وزیرعظم کرونا معاملے پر سستی شہرت حاصل کرنا چاہتے ہیں وہ اس معاملے پر بھی سیاست کررہے ہیںمیں اپنے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری سے پیشگی معذرت کے ساتھ یہ بات کہ رہا ہوں کیونکہ انہوں نے اس حوالے سے ہمیں بیان بازی سے منع کیا ہے لیکن مجبورا مجھے یہ باتیں کرنی پڑرہی ہے عمران خان ابھی تک اپنی کنٹینر والی سیاست سے باہر نہیں نکل پائے ہیں، سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ ٹرینوں اور فضائی آپریشن کی بندش وفاقی حکومت کی جانب سے ہی لگائی گئی تھی کیونکہ یہ وفاق کا ہی سبجیکٹ ہے لیکن اسے اون نہیں کیا جارہا جس کے نتیجے میں اس کے اثرات اس طرح مرتب نہیں ہو رہے جیسے کہ ہونے چاہیں آئے دن ٹی وی پر آکر کہا جارہا ہے کہ عوام بھوکے مر جائیں گے میں پوچھتا ہوں اگر خدا نخواستہ ہمار امزدور پیشہ طبقہ اور بزرگ اس وباءسے متاثر ہوگیا توکیاہمارے پاس اتنے وینٹی لیٹرز ہیں جو ہم ان کی زندگیاں بچا سکیں گے اس لیے میری اپیل ہے کہ خدا کے واسطے اس معاملے پر سیاست نہ کی جائے اور ایک قوم بن کر اس وباءکا مل کر مقابلہ کیا جائے وزیر اطلاعات نے کہا کہ انشاءاللہ سندھ حکومت بہت جلد عوام کے تعاون سے کورونا وائرس کے پھیلاﺅ پر قابو پالے گی۔ انہوں نے کہا کہ ہم متاثرہ افراد کی ہر ممکن مدد اور ان تک راشن پہنچانے کے لئے فلاحی نمائندوں،

علماءکرام اور معززین علاقہ سے مدد لے رہے ہیں تاکہ تمام ضرورت مندافراد کو راشن ان کے دروازے تک پہنچا سکیں۔سندھ حکومت کسی بھی صور ت متاثرہ افراد کو تنہا نہیں چھوڑے گی۔صوبائی وزیر نے کہا کہ کورونا وائرس کے خلاف جنگ جیتنے کے لئے ہمیں عوام کے مکمل تعاون کی ضرورت ہے اور احتیاط و سماجی فاصلے کے ذریعے ہی اس وبا ءکو ختم کیا جاسکتا ہے۔ صوبائی وزیر اطلاعات نے قانون نافذ کرنے والے اداروں کو بھی خراج تحسین پیش کیا ۔علاوہ ازیںصوبائی وزیر اطلاعات و بلدیات سندھ سید ناصر حسین شاہ نے وزیر اعلی سندھ کے بہنوئی مہدی شاہ کے انتقال پر گہرے رنج و غم کا اظہار کرتے ہوئے مرحوم کی مغفرت اور بلندی درجات کی دعا کی ہے۔ ناصر حسین شاہ نے کہا ہے کہ وہ نہایت ہی نفیس اور خوش اخلاق ہونے کے ساتھ درمند دل کے بھی مالک تھے۔ اللہ سے دعا ہے کہ وہ ان کو اپنی جوار رحمت میں اعلیٰ مقام عطا فرمائے،آمین