دل کے دورے کے باعث این آئی سی وی ڈی پہنچایا گیا جہاں ڈاکٹروں نے کورونا کا مریض قرار دیا علاج کے بجائے سول اسپتال بھجوادیا سول اسپتال میں بھی ڈاکٹرز مریض کو چھوڑ کر بھاگ کھڑے ہوئے ۔ مریض نے تڑپ تڑپ کر دم توڑ دیا،

پیپلز پارٹی کے سینئر رہنماء مولا بخش چانڈیو کے کزن این آئی سی وی ڈی اور سول اسپتال حیدرآباد میں ڈاکٹروں کی مبینہ غفلت کے باعث جاں بحق ہو گئے۔مولا بخش چانڈیو کے مطابق ان کے کزن اللہ ڈنو کو دل کے دورے کے باعث این آئی سی وی ڈی پہنچایا گیا جہاں ڈاکٹروں نے انہیں کورونا کا مریض قرار دیا اور علاج کرنے کے بجائے سول اسپتال بھجوادیا سول اسپتال میں بھی ڈاکٹرز مریض کو چھوڑ کر بھاگ کھڑے ہوئے ۔ بر وقت علاج نہ ملنے کے نتیجے میں مریض نے تڑپ تڑپ کر دم توڑ دیا، مولا بخش چانڈیو نے کہا ہے کہ ڈاکٹروں کی غفلت کے باعث ان کی فیملی میں یہ حادثہ پیش آیا۔اگر ڈاکٹر ہی کورونا سے گھبرا کر مریضوں کو چھوڑ دیں گے تو مریضوںکا علاج کیسے ہوگا۔ انہوںنے چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری اور وزیر اعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ سے مطالبہ کیا کہ معاملے کی شفاف تحقیقات کرا کے مریض کی ہلاکت کے ذمہ داروں کیخلاف کارروائی کی جائے۔