زبردست عوامی احتجاج پر کے الیکٹرک نے گھٹنے ٹیک دیئے، ایوریج بل واپس، میٹر ریڈنگ شروع

کے الیکٹرک کی جانب سے ایوریج بل بھیجے جانے پر شہریوں نے زبردست احتجاج کیا شہریوں کا احتجاج اعلیٰ حکومتی شخصیات تک پہنچا اور کے الیکٹرک کے اعلیٰ افسران کی طلبی ہوئی جس کے بعد یہ فیصلہ ہوگیا ہے کہ کے الیکٹرک اب میٹر ریڈنگ شروع کرے گی اور نئے بل نی میٹر ریڈنگ کے مطابق عوام کو بھیجے جائیں گے صارفین نے شکایت کی تھی کہ الیکٹرک نے میٹر ریڈنگ لیے بغیر اضافی رقم کے حامل غیرمعمولی بھاری بل بھیج دیے ہیں جن میں پرانے واجبات اور ایڈجسٹمنٹ کے نام پر بال کی رقم بڑھا دی گئی تھی گورنر سندھ عمران اسماعیل اور وزیراعلی سندھ سید مراد علی شاہ اور وزیر توانائی امتیاز شیخ نے عوامی شکایات پر توجہ دی اور ایکشن دکھایا جس کے بعد کے الیکٹرک کی انتظامیہ نے گھٹنے ٹیک دیئے اور شہر میں میں ٹریڈنگ شروع کرنے کا اعلان کردیا ہے اس سے پہلے کے الیکٹرک صرف یہ شور مچا رہی تھی کہ صوبائی اور وفاقی حکومت کے ذمے ہے 240 ارب روپے کے واجبات کی ادائیگی رہتی ہے اسے یقینی بنایا جائے ورنہ شہر میں بلا تعطل بجلی کی فراہمی یقینی بنانا مشکل ہو جائے گا کے الیکٹرک کا یہ دباؤ کا حربہ کام نہیں آیا اور حکومت نے اسے میٹر ریڈنگ شروع کرکے عوام کو صحیح بل بھیجنے کی ہدایت کی ہے۔