صحافت کے شعبہ میں قدم رکھنے سے قبل وہ ایک کرکٹر

حامد میر کا کہنا ہے کہ میں پاکستان کی ڈومیسٹک کرکٹ کھیل چکا ہوں، شہباز شریف کے کہنے پر ٹیم سے نکال دیا گیا تھا، جب جوان تھا تو کرکٹر بننے کا شوق تھا اور لاہور کی جانب سے کھیلتا تھا، ایک میچ سے قبل پچ اکھاڑنے کے الزام میں اس وقت کے ایل سی سی اے کے صدر نے مجھے پر پابندی عائد کر دی تھی۔ تفصیلات کے مطابق پاکستان کے نامور صحافی حامد میر نے نجی ٹی وی چینل کے پروگرام سے گفتگو کرتے ہوئے دلچسپ انکشاف کیا ہے۔
حامد میر کا کہنا ہے کہ صحافت کے شعبہ میں قدم رکھنے سے قبل وہ ایک کرکٹر تھے۔ انہیں کرکٹ کھیلنے کا بہت شوق تھا اور پاکستان کی فرسٹ کلاس کرکٹ بھی کھیل چکے ہیں۔ جب وہ جوان تھے تو لاہور کی جانب سے فرسٹ کلاس کرکٹ کھیلا کرتے تھے ، تاہم پھر جب ان کے والد صاحب کا انتقال ہوا تو انہوں نے کرکٹ چھوڑ کر صحافت کے شعبہ میں قدم رکھنے کا فیصلہ کیا۔

حامد میر نے انکشاف کیا ہے کہ جب وہ فرسٹ کلاس کرکٹ کھیلا کرتے تھے، تب انہیں لاہور کرکٹ ایسوسی ایشن کے اس وقت کے صدر شہباز شریف نے ٹیم سے نکال دیا تھا۔ شہباز شریف سیاست میں آنے سے قبل ایل سی سی اے کے صدر رہ چکے ہیں۔ ایک مرتبہ لاہور اور کراچی کے درمیان میچ سے قبل پچ اکھاڑ دی گئی تھی، جس کا الزام پاکستان کے سابق کرکٹر عامر سہیل اور ان پر لگایا گیا۔
اس واقعے کے بعد اس وقت ایل سی سی اے کے صدر شہباز شریف نے عامر سہیل پر ایک سال کی پابندی عائد کر دی تھی، جبکہ انہیں ٹیم سے نکالا دیا گیا تھا ۔ بعد ازاں ان پر لگایا گیا الزام ثابت نہیں ہوا، تاہم پھر بھی انہیں ٹیم میں شامل نہیں کیا گیا۔ جبکہ پھر جب ان کے والد صاحب کا انتقال ہوا، تو بڑے بھائی ہونے کی وجہ سے ان پر کافی ذمے داریاں آن پڑی تھیں، اسی لیے انہوں نے پھر کرکٹ کو خیرباد کہہ دینے کا فیصلہ کیا۔




اپنا تبصرہ بھیجیں