پاکستان میرین اکیڈمی کے فارغ التحصیل سب انجنئیرزاور ڈیک افسران کا پریس کلب پر اہنےروزگار کیلیے احتجاج

پاکستان میرین اکیڈمی کے فارغ التحصیل سب انجنئیرزاور ڈیک افسران کا پریس کلب پر اہنےروزگار کیلیے احتجاج
کراچی فروری 24:- پاکستان میرین اکیڈمی سے ہر سال تقریبا 200 سے زائد فارغ التحصیل طالبعلم سب انجنئیرز اور ڈیک افسران وزارت بحری امور کی عدم توجہ ہورہے ہیں اس سلسلے میں طلباء کے ایک وفد نے وفاقی وزیر بحری امور علی زیدی اور وزارت کے نمائندوں سے بھی 3 ملاقاتیں کی لیکن سب بے سود ثابت ہوئیں.لہذا انہوں نے آج پریس کلب پر سینکڑوں کی تعداد میں اپنے مسائل کے حل اور مناسب روزگار کیلیے بھرپور احتجاج کیا۔طلباء نے احتجاج کے دوران میڈیا کو بتایا کہ انہوں نے وفاقی وزیر اور وزارت کو مناسب تجاویز دیں لیکن کوئی خاطر خواہ نتیجہ نہیں ملا اور لارے لپے دیئے۔مزید براں کی اس میرین فیلڈ سے ملک کو لاکھوں ڈالر سالانہ زرمبادلہ بھی ملتا ہے اور ترسیلات زر بھی ملکی خزانہ می لانے کا باعث ہے۔طلباء نے تجاویز دیتے ہوئے بتایا کہ١۔پاکستان شپنگ کمپنی کے ایک جھاز پر کم از کم دس کیڈٹس کی تعداد ہونی چاھیئے ٢۔پاکستانی چارٹرز جھازوں پر پاکستانی سی فٹرز خصوصا کیڈٹس کی نوکری روزگار پر فوری عملدرآمد کرایا جائے اور ٣۔حکومتی سطح پر بین الاقوامی شپنگ کمپینیوں تک رسائی کی جائے اور سی فٹرز کے روزگار کے حصول کیلیے مستقل بنیادوں پررابطے قائم کئے جائیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں