جیونیوز میں گیارہ گھنٹے کی ہڑتال، پی ایس ایل تقریب کے بائیکاٹ کا فیصلہ

جیو نیوز میں تنخواہوں کے معاملے پر قائم ورکرز کمیٹی نے انتظامیہ کی جانب سے وعدوں پر عملدرآمد نہ کیے جانے کے خلاف اپنا جاری احتجاج شام 7 بجے تک بڑھا دیا ہے اور ساتھ ہی یہ فیصلہ کیا ہے کہ شام 7 بجے ہڑتال ختم کرنے کے بعد بھی ہڑتال کے اوقات کار کی کوئی خبر فائل نہیں کی جائے گی۔ جیو نیوز میں تنخواہوں کی عدم ادائیگی کے معاملے پر قائم ورکرز کمیٹی روزانہ کی بنیاد پر اپنے لائحہ عمل کو ازسرنو ترتیب دے رہی ہے بدھ کو کمیٹی کے اجلاس میں طے پایا کہ احتجاج کا دائرہ مزید وسیع کردیا جائے فیصلے کے تحت صبح 8 بجے سے شام 7 بجے تک اسپورٹس ڈیسک، تمام بیوروز اور او ایس آر ڈیسک سے کوئی ٹکر اور خبر فائل نہیں کی جائے گی اور نا ہی کوئی فوٹیج آن ایئر کے لیے بھیجی جائے گی جیو نیوز کا اّوٹ پٹ ڈپارٹمنٹ ہڑتال میں شامل ہوگا اور دن بھر کے تمام بلیٹنز میں دیگر ذرائع سے آنے والی خبروں کی بھی کوئی بریکنگ نہیں کی جائے گی جبکہ ٹکرز بھی نارمل چلائے جائیں گے ورکرز کمیٹی کے مطابق ہمارا مطالبہ ہے کہ انتظامیہ سے 3 دسمبر 2019 کو ہوئے مذاکرات میں جس معاہدے پر دستخط ہوئے تھے اس پر اس کی روح کے مطابق عملدرآمد کیا جائے۔ یاد رہے کہ 3 دسمبر 2019 کو جیو نیوز کے سی ای او میر ابراہیم الرحمن،ایم ڈی نیوز اظہر عباس اور ڈائریکٹر نیوز رانا جواد کی موجودگی میں گروپ ایم ڈی فنانس کامران حفیظ نے یہ یقین دہانی کرائی تھی ہر ملازم کو ہر 30 دن میں ایک تنخواہ ادا کی جائے گی اور 50 ہزار تک کی تنخواہ کی ادائیگی کے لیے ہر ماہ کی 10 تاریخ دی تھی جبکہ باقی بیجز کی تنخواہیں 20 سے 28 تاریخ کے دوران ادا کی جانا تھیں لیکن معاہدے پر عملدرآمد نہیں کیا جارہا۔ ورکرز کمیٹی کے مطابق جمعرات 20 فروری کو شام 7 بجے تک پی ایس ایل کی افتتاحی تقریب اور پہلے میچ کی بھی کوریج نہیں کی جائے گی اور جمعرات کی شام ورکرز کمیٹی اپنے اجلاس میں آئندہ کا لائحہ عمل طے کرے گی۔



اپنا تبصرہ بھیجیں