کوئٹہ: شارع اقبال پر دھماکا، 8 افراد جاں بحق، متعدد زخمی

بلوچستان کے دارالحکومت کوئٹہ میں پریس کلب کے قریب احتجاج کے دوران دھماکے کے نتیجے میں 7 افراد جاں بحق اور 19 افراد زخمی ہوگئے۔ بلوچستان حکومت کے ترجمان لیاقت شاہوانی نے واقعے میں 7 افراد کے جاں بحق ہونے کی تصدیق کی۔ دوسری جانب سول ہسپتال کوئٹہ کے ترجمان وسیم بیگ کا کہنا تھا کہ دھماکے کے نتیجے میں 19 افراد زخمی بھی ہوئے۔ ڈان نیوز کے مطابق دھماکا شارع عدالت پر قائم پریس کلب کے قریب جاری احتجاج کے دوران ہوا۔کوئٹہ میں شارع اقبال پر ہونے والے دھماکے میں 8 افرد جاں بحق اور متعدد زخمی ہوگئے ہیں۔ پولیس کے مطابق دھماکے سے قریبی عمارتوں اور متعدد گاڑیوں کو نقصان بھی پہنچا ہے۔ لاشوں اور زخمیوں کو فوری طور پر سول اسپتال کوئٹہ منتقل کیا گیا۔ صوبائی انتظامیہ کے مطابق دھماکے کے بعد سول اسپتال کوئٹہ میں ایمرجنسی نافذ کردی گئی ہے۔ ریسکیو ذرائع کے مطابق دھماکے میں زخمی ہونے والوں میں سے بیشتر کی حالت تشویشناک بتائی جارہی ہے۔ سیکیورٹی فورسز نے دھماکے کی جگہ کو گھیرے میں لے کر شواہد اکٹھے کرنا شروع کردیے ہیں۔

سیکیورٹی حکام نے دھماکے کی نوعیت کے حوالے سے فی الحال کچھ بھی کہنے سے انکار کیا ہے۔ڈپٹی انسپکٹر جنرل (ڈی آئی جی) کوئٹہ عبدالرزاق چیمہ نے 7 افراد کے جاں بحق اور 21 زخمیوں کی تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ ‘یہ خود کش دھماکا لگ رہا ہے’۔پولیس کے مطابق دھماکے سے متعدد گاڑیوں کو بھی نقصان پہنچا، واقعے کے بعد سیکیورٹی فورسز نے جائے وقوع کو گھیرے میں لے کر تحقیقات کا آغاز کردیا۔ وزیراعظم عمران خان نے کوئٹہ دھماکے کی شدید مذمت کرتے ہوئے قیمتی جانوں کے ضیاع پر دکھ اور افسوس کا اظہار کیا اور زخمیوں کو بہترین طبی امدادکی فراہمی کی ہدایت کی۔ اس سے قبل بلوچستان کے ضلع ہرنائی میں 9 فروری کو بم دھماکے میں فرنٹیئر کور (ایف سی) کا ایک اہلکار شہید اور دیگر 5 زخمی ہوگئے تھے۔ ہرنائی کے ڈپٹی کمشنر عظیم جان دامڑ نے واقعے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا تھا کہ ایف سی کی گارٹی معمول کی گشت پر تھی اور خوست کے علاقے میں موجود تھی کہ نصب شدہ بم دھماکے سے پھٹ گیا جس سے ایک جوان شہید اور دیگر 5 زخمی ہوگئے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں