منشیات کےعلاج و بحالی کے 30 مراکز کی رجسٹریشن ختم کرنے کا فیصلہ

سندھ حکومت نے منشیات کےعلاج و بحالی کے 30 مراکز کی رجسٹریشن ختم کرنے کا فیصلہ کیا ہے اور سندھ ہیلتھ کیئر کمیشن کو منشیات کےعلاج و بحالی کے مراکز کی انسپکشن کا حکم دیا۔ اس حوالے سے چیف سیکریٹری سندھ سید ممتاز علی شاہ کی زیرصدارت اجلاس ہوا، جس میں صوبے میں منشیات کےعلاج و بحالی مراکز سے متعلق بریفنگ دی گئی۔ سیکریٹری سوشل ویلفیئر نے اجلاس کو بتایا کہ صوبے میں منشیات کےعلاج و بحالی کے 50 سے زائد ادارے رجسٹرڈ ہیں، جبکہ اے این ایف نے بتایا کہ 50 میں سے 30 ادارے فنڈنگ لیتے ہیں لیکن کام نہیں کررہے۔ جس پر چیف سیکریٹری سندھ نے ہدایت کی کہ ایسےاداروں کی رجسٹریشن معطل کی جائے، جبکہ سندھ ہیلتھ کیئرکمیشن کو منشیات کے علاج و بحالی مراکز کی انسپکشن کا حکم بھی دیا۔ چیف سیکریٹری نے کہا کہ کام کرنے والےعلاج و بحالی مراکز کو اپ گریڈ کیا جائے گا، ایسےاداروں کے لیے ڈاکٹر، سائیکالوجسٹ اور فنڈنگ حکومت سندھ فراہم کرےگی۔ اجلاس میں سیکریٹری سوشل ویلفیئر، سیکریٹری صحت، ایڈیشنل آئی جی کراچی اور اے این ایف کے نمائندوں نے بھی شرکت کی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں