بلاول بھٹو زرداری کو نوٹس انہیں عوامی ایشوز پر خاموش کرنے کی سازش ہے پی پی چیئرمین گندم، چینی، گیس اور پانی کے بحران سمیت قانون کی حکمرانی کے لئے آواز بلند کرتے رہینگے : بیرسٹر مرتضیٰ وہاب

کراچی : سندھ حکومت کے ترجمان مشیر قانون ، ماحولیات و ساحلی ترقی بیرسٹر مرتضیٰ وہاب نے کہا ہے کہ بلاول بھٹو زرداری کو نوٹس انہیں عوامی ایشوز پر خاموش کرنے کی سازش ہے پی پی چیئرمین گندم، چینی، گیس اور پانی کے بحران سمیت قانون کی حکمرانی کے لئے آواز بلند کرتے رہینگے وہ گھبرانے والے نہیں ہیں پی ٹی آئی اپنی نااہلی کی وجہ سے پاکستان تباہی انسٹی ٹیوٹ بن چکی ہے پیپلزپارٹی سولو فلائیٹ پر یقین نہیں رکھتی ، مارچ کے مہینے میں مارچ کے لئے اپوزیشن جماعتوں سے مشاورت کرینگے اٹھارہویں آئینی ترمیم کے تحت کراچی کے تین بڑے اسپتالوں کے انتظامی امور سندھ حکومت کے پاس ہیں پی ٹی آئی بلاوجہ ان معاملات میں مداخلت سے گریز کرے۔ آئی جی سندھ پولیس کا معاملہ افہام و تفہیم کے ساتھ حل کرلیا جائیگا وہ سندھ سمبلی کمیٹی روم میں پریس کانفرنس سے خطاب کررہے تھے بیرسٹر مرتضی وہاب نے مزید کہا کہ صحت صوبائی معاملہ ہے ہم این آئی سی وی ڈی ،جناح ہسپتال اور این آئی سی ایچ کے وفاق کے حوالے کرنے سے سپریم کورٹ کے فیصلہ کا احترام کرتے ہوئے اس سے اختلاف رکھتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ان تینوں ہسپتالوں کو چلانے کے لیے وفاقی حکومت نے بجٹ میں ایک روپیہ بھی مختص نہیں کیا مگر تحریک انصاف کے رہنما ان اسپتالوں کو وفا ق کی جانب سے چلانے کے لیے بیان بازی کر رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ وفاقی حکومت کے 17 جون 2019 کے کابینہ اجلاس میں یہ فیصلہ کیا گیا ہے۔

وفاقی حکومت ان ہسپتالوں کو چلا نہیں سکتی اور ان کو سندھ حکومت ہی بہتر چلا رہی ہے مگر تحریک انصاف کے اراکین سندھ اسمبلی نے این آئی سی وی ڈی کے دورے میں بلندوبانگ دعوے کئے کہ اب ان ہسپتالوں کو پی ٹی آئی سنبھالے گی۔انہوں نے کہا کہ خرم شیر زمان جیسے سیاست دان اپنی ٹویٹ میں کہتے ہیں کہ یہ اسپتال اب پاکستان تحریک انصاف چلائے گی۔انہوں نے کہا کہ ان اراکین کو اتنا علم نہیں کہ پاکستان تحریک انصاف اور وفاقی اور صوبائی حکومت علیحدہ چیزیں ہیں ہر معاملہ پر بے سروپا بیان دینے کے بجائے وہ آئین و قانون کا مطالعہ کریں۔انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ کے فیصلے میں کہا گیا ہے کہ 2011 سے لے کر 2019 تک ان ہسپتالوں پر جو اخراجات ہوئے ہیں وہ اخراجات صوبائی حکومت کو واپس کرنے ہوں گے۔انہوں نے کہا کہ ان تینوں ہسپتالوں کو چلانے کے لیے سالانہ 16 ارب روپے کا بجٹ درکار ہے جسے سندھ حکومت کابینہ اور اسمبلی کی منظوری سے عوام کی فلاح کے لئے منظور کرتی ہے۔انہوں نے کہا کہ ان ہسپتالوں بالخصوص این آئی سی وی ڈی کی حالت سندھ حکومت کے پاس آنے سے قبل کیا تھی اور آج کیا ہے۔آج یہ ادارے اسٹیٹ آف دی آرٹ بن چکے ہیں۔پورے پاکستان سے آج لوگ ان اداروں میں علاج کرانے کےلئے آتے ہیں ۔صحافیوں کے سوالات کے جواب دیتے ہوئے صوبائی مشیر نے کہا کہ وفاقی کابینہ پہلے ہی یہ معاملہ حل کر چکی ہے مگر خرم شیر زمان بیان بازی سے اپنی دکان چمکا رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ پچھلے 17 ماہ میں عوام کے مسائل کے حل کے لیے تحریک انصاف سنجیدگی نہیں دیکھا رہی بلکہ عوام کو ذخیرہ اندوزوں کے حوالے کردیا ہے۔انہوں نے کہا کہ اگر پاکستان کی معاشی صورتحال کو کوئی جماعت سنبھال سکتی ہے تو وہ پاکستان پیپلزپارٹی ہے کیونکہ پیپلزپارٹی سولو فلائٹ پر یقین نہیں رکھتی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں