بینظیر بھٹو شہید پارک میں بچوں کے کھیلنے کے گراﺅنڈ کا افتتاح

کراچی :  صوبائی وزیر بلدیات سید ناصر حسین شاہ نے بے نظیر بھٹو شہید پارک میں کیڈز پلے ایریا کا افتتاح کیا اس موقع پر صوبائی وزیر بلدیات سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ چئیرمین بلاول بھٹو زرداری کا ویژن ہے کہ کراچی میں صحت مند رحجان کو فروغ دیا جائے اور بے نظیر بھٹو شہید کے نام پر بنائے گئے پارک کو صاف ستھرا رکھنے کے لیے ہر قسم کے اقدامات کریں گے۔ اس موقع پر وزیراعلیٰ سندھ کے کوآرڈینیٹر شہزاد میمن، وزیراعلیٰ سندھ کے معاون خصوصی وقار مہدی، سیکریٹری بلدیات روشن علی شیخ، ڈی جی کے ڈی اے سید سیف الرحمن، ڈی سی ساﺅتھ ارشاد سوڈھر، وزیراعلی کے کوارڈینیٹر شہزاد میمن بھی موجود تھے۔ سید ناصر حسین شاہ نے مزید کہا کہ ہماری حکومت عوامی حکومت ہے اور عوام کی خدمت ہم اپنا فرض سمجھتے ہیں۔ سید ناصر حسین شاہ نے کہا کہ وفاقی حکومت سندھ کو ہر طرح سے نظر انداز کر رہی ہے۔ اس موقع پر معروف سیاسی و سماجی رہنما انحصار الدین کو زبردست خراج تحسین پیش کرتے ہیں کہ جس طرح انہوں نے پارک کو صاف ستھرا رکھنے کے لئے خصوصی طور پر کام کیا یہ ہمارے لیے قابل تقلید ہے اور ہم امید کرتے ہیں کہ کراچی کو صاف ستھرا رکھنے کے لئے اپنا کردار ادا کریں گے۔

بعدازاں سیدناصرحسین شاہ نے بچوں میں انعامات بھی تقسیم کئے۔ انہو ں نے مزید کہا کہ بینظیر بھٹو شہید کے نام سے اس پارک کو بہتر کرنے کے لئے اقدامات کئے ہیں، سیکیورٹی، لائٹ اور دیگر سہولیات کی فراہمی کو بہتر کیا جارہا ہے، پہلے کی نسبت اب پارک میں بہت زیادہ لوگ آتے ہیں، گرامر اسکول کی مدد سے پلے ایریا بنایا گیا ہے اور مزید بھی پلے ایریا بنائے جائیں گے۔ وزیر بلدیات نے کہا کہ حکومتی کاموں کو متنازعہ نہیں بنایا جائے سندھ حکومت کا حق ہے کہ آئی جی کو تبدیل کیا جائے، دوسرے صوبوں میں تبادلے کو متنازعہ نہیں بنایا جاتا۔انھوں نے کہا کہ سندھ میں مخالفت اور مشکلات کے باوجود اکثریتی حکومت پیپلزپارٹی کی ہے، چاروں صوبوں میں کارکردگی میں وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ کی کارکردگی سب سے بہتر ہے۔ ناصر شاہ نے کہا کہ امن و امان کی صورت حال بہتر نہ ہونے اور دیگر مسائل کی وجہ سے آئی جی سندھ کو تبدیل کرنے کا فیصلہ کیا گیا، امید ہے وفاقی حکومت اس مسئلے کو جلد حل کرکے آئی جی کو تبدیل کردیں گے۔ وزیر بلدیات ناصر حسین شاہ نے کہا کہ سندھ میں اگر آٹے کا بحران ہو تو سندھ حکومت ذ مہ دا ر ہے اور اگر پورے ملک میں بحران ہوتا ہے تو وفاقی حکومت ذمہ دار ہے۔ چکی والے آٹے میں مسئلہ آتا ہے مگر مل مالکان کو سندھ حکومت کی جانب سے سبسڈی دی جاتی ہے۔ انھوں نے کہا کہ ٹرانسپورٹرز کی ہڑتال کی وجہ سے کچھ مسئلہ ہوا تھا مگر ایل این سی کی مدد سے آٹا پہنچایا جاتاتھا دو تین دن میں مکمل بحران سندھ سے ختم ہوجائے گا۔