بچوں میں کینسر کی روک تھام بہتر ہوئی ہے ۔ وزیراعلیٰ سندھ

کراچی . وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے کہا کہ دنیا میں بچوں میں کینسر کی روک تھام بہتر ہوئی ہے جبکہ پاکستان میں 8 ہزار سے 10 ہزار بچوں کے کینسر کے کیسز رپورٹ ہوئے ہیں اور پاکستان میں اس وقت بچوں کے کینسر کے علاج کے مجموعی طورپر 13 مراکز ہیں ۔انہوں نے یہ بات آج مقامی ہوٹل میں چوتھے پاکستانی سوسائٹی آف پیڈیاٹرک آنکالوجی (پی ایس پی او ) کی کانفرنس میں شر کت کرتے ہوئے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ یہ کانفرنس بچوں میں کینسر کی روک تھام جیسے اہم مقصد کے حوالے سے منعقد کی گئی ۔وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ ہمارے ملک میں بہت ہی کم تربیت یافتہ ڈاکٹرز اور نرس و دیگر عملہ ہے اور اسی وجہ سے بچوں کا کینسر کا علاج 25 سے 30 فیصد تک ہوتا ہے جبکہ ترقی یافتہ دنیا میں یہ علاج 80 سے 85 فیصد ہے۔ یہ مسئلہ اب عالمی معیار پر ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن تک پہنچا ہے۔ اب ڈبلیو ایچ او نے دنیا بھر میں ایسے اقدامات اٹھانا شروع کیے ہیں، جس سے کینسر میں مبتلا 60 فیصد بچوں کی زندگی بچ جائے گی۔انہوں نے کہا کہ سندھ حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ چائلڈ کینسر کیئر سینٹر ز سکھر اور حیدرآباد میں قائم کیے جائیں۔وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ سندھ حکومت پاکستان سوسائٹی آف پیڈیاٹرک آنکالوجی کے ساتھ ہر قدم پر اس مقصد کے لیے ساتھ ہوگی اور بھرپور تعاون کرے گی کیونکہ صحت مند بچے ہمارے ملک کا مستقبل اور قیمتی سرمایہ ہیں لہٰذا ہمیں بچوں کی صحت پر بھرپور توجہ دینی چاہیے۔ سندھ حکومت پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ کے تحت بچوں کے کینسر کے علاج کے سینٹرز قائم کررہی ہے اور میں چاہتا ہوں کہ پاکستان کینسر میں مبتلا بچوں کے علاج میں مہارت کے نام سے دنیا میں پہنچانا جائے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں