پنجاب میں سابق حکومت کی بے ضانطگیوں، بےقاعدگیوں، خلاف قانون ادائیگیوں اور کرپشن کے متعلق رپورٹ منظرعام پر آگئی ہے۔

پنجاب میں سابق حکومت کی بے ضانطگیوں، بےقاعدگیوں، خلاف قانپنجاب حکومت نے دو والیمز اور ایک ہزار چالیس صفحات پر مشتمل آڈٹ رپورٹ 2017اور2018 جاری کردی ہے۔

ہم نیوز کو موصول دستاویزات کے مطابق سابق دور حکومت میں 18 کھرب 48 ارب 92 کروڑ 22 لاکھ 41 ہزار 37 روپے کرپشن ہوئی۔پنجاب حکومت میں پبلک فنانشل مینجمنٹ کے معاملات میں 8 کھرب 86 ارب 79 کروڑ 20 لاکھ کی بے ضابطگیاں ہوئیں۔

محکمہ زراعت میں 8 ارب 91 کروڑ 75 لاکھ 8 ہزار 220 روپے کی خردبرد کا انکشاف ہوا۔ پنجاب کے مختلف اضلاع میں پیٹرول، اضافی اخراجات اور ریکارڈ مرتب ناں ہونے باعث 6 ارب 87 کروڑ 41 لاکھ 30 ہزار روہے کا نقصان ہوا۔محکمہ داخلہ پنجاب میں 18 ارب 20 کروڑ 28 لاکھ 69 ہزار سے زائد، محکمہ صحت میں 28 ارب 55 کروڑ سے زائد، ہائیر ایجوکیشن میں 27 ارب 89 کروڑ 78 لاکھ سے زائد، انفارمیشن اینڈ کلچر میں 12 ارب 65 کروڑ 87 لاکھ سے زائد جبکہ ہائیکورٹ میں 14 ارب 17 کروڑ سے زائد کی بے ضابطگیاں رپورٹ ہوئیں۔

لائیو اسٹاک میں 3 رب 54 کروڑ 78 لاکھ، پاپولیشن ویلفیر ڈپارٹمنٹ میں 1 ارب 14 کروڑ، پی اینڈ ڈی میں 70 کروڑ 54 لاکھ سے زائد اور ٹرانسپورٹ ڈپارٹمنٹ میں 37 ارب 83 کروڑ 38 لاکھ 95 ہزار 892 روپے کی کرپشن ہوئی۔

زکوٰۃ وعشر میں 4 ارب 98 کروڑ جبکہ محکمہ کھیل میں 41 کروڑ 70 لاکھ سے زائد کی بضابطگیاں منظر عام پر آئیں۔ون ادائیگیوں اور کرپشن کے متعلق رپورٹ منظرعام پر آگئی ہے۔