لینڈ مافیا سرغنہ کو گرفتار کرو

کراچی (    ) سمندر کنارے آباد ماہی گیروں کی قدیم بستی الیاس جت گوٹھ کے علاقے حسن جت گوٹھ کے مکینوں نے گذشتہ روز لینڈ مافیا کیخلاف احتجاجی مظاہرہ کرتے ہوئے سخت نعریبازی کی۔ احتجاجی مظاہرین کے ہاتھوں میں پلے کارڈ تھے، جن پر لینڈ مافیا سرغنہ کو گرفتار کرو، ہمیں تحفظ فراہم کرو، ہمیں لینڈ مافیا کے حملوں سے نجات دلائو، ظلم کے ضابطے ہم نہیں مانتے اور لینڈ مافیا کی زیادتیوں کیخلاف دیگر نعرے درج تھے۔ مظاہرین کی قیادت محلہ کمیٹی حسن جت گوٹھ کے رہنمائوں محمد الیاس، حیدر علی، مشتاق کھوسہ، امیر بخش، شکیلہ، کلثوم و دیگر کر رہے تھے۔ اس موقع پر محلہ کمیٹی کے چیئرمین محمد الیاس نے مظاہرین کی قیادت کرتے ہوئے کہا کہ آئے روز لینڈ مافیا سرغنہ مشتاق کشمیری، طواسین کشمیری اور محمد عشرت عرف لنگڑا ہمیں گھر خالی کرنے اور پلاٹوں سے دستبردار ہونے کی دھمکیاں دیتے رہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مذکورہ لینڈ مافیا سرغنہ علاقہ میں آباد فی گھر سے دو دو لاکھ روپے بھتی وصول کرنے کی دھمکیاں بھی دیتے رہتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ طویل عرصہ سے مذکورہ لینڈ مافیا سرغنہ نے ہمارے لیئے زمین تنگ کردی ہے، ہم گھروں اور پلاٹوں پر قبضے کے ڈر سے گھروں تک محدود ہوکر رہ گئے ہیں، بیروزگاری کی وجہ سے ہمارے گھروں کے چولہے تک نہیں جل پاتے اور تنگدستی کا یہ عالم ہے کہ بچوں کے اسکول کی فیس تک ادا نہیں کر پا رہے۔ اس موقع پر ایک بیواہ خاتون شکیلہ نے بتایا کہ گذشتہ 6 سالوں سے لینڈ مافیا سرغنہ مشتاق کشمیری، طواسین کشمیری اور محمد عشرت عرف لنگڑا نے ہمیں اپنے پلاٹوں سے محروم رکھا ہوا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ میرے مرحوم شوہر بھی مذکورہ لینڈ مافیا کے ظلم و جبر کا شکار ہوکر اس دنیا سے شل بسے لیکن ان ظالموں کو تب بھی ہم غریب اور لاواثوں پر رحم نہیں آیا۔ اس موقع پر مشتاق کھوسہ نے بتایا کہ آئے دن مشتاق کشمیری، طواسین کشمیری اور عشرت لنگڑا ہمارے پلاٹوں کا دیگر لینڈ مافیا کے ساتھ سودہ طے کردیتے ہیں اور ہمیں ہر وقت گھر خالی کرنے اور پلاٹوں سے دستبردار ہونے کی دھمکیاں دیکر شدید خوف و ہراس میں مبتلا کیا جا رہا ہے۔ احتجاجی مظاہرین نے وزیراعلیٰ سندھ، آئی جی سنھ پولیس اور ایس ایس پی ملیر سے مطالبہ کیا ہے کہ خدارا ہم غریبوں، بے سہارا اور یتیوں پر ترس کھا کر ہمیں لینڈ مافیا سرغنہ مشتاق کشمیری، چواسین کشمیری اور عشرت لنگڑا کے مظالم سے نجات فراہ کرکے ہمیں تحفظ فراہم کیا جائے۔ کوسٹل میڈیا سینٹرابراہیم حیدری



اپنا تبصرہ بھیجیں