ممتاز کاروباری شخصیات اور تاجر برادری کے وفد کی وزیر اعظم عمران خان سے کراچی میں ملاقات

کراچی  : وزیر اعظم عمران خان سے کراچی میں ممتاز کاروباری شخصیات اور تاجر برادری کے وفد نے ملاقات کی اوراپنے مسائل سے وزیراعظم کوآگاہ کیا۔ اس موقع پر گورنرہاؤس میں وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی، وزیر آبی وسائل فیصل واوڈا، وزیر بحری امور سید علی زیدی، مشیر خزانہ ڈاکٹر عبدالحفیظ شیخ، مشیر تجارت عبدالرزاق داود، گورنر سندھ عمران اسمعیل، گورنر اسٹیٹ بینک رضا باقر اور سینئر افسران ملاقات میں موجود تھے۔تاجروں کے وفد میں صدر امریکن بزنس کونسل عدنان اسد ,چیرمین پاکستان بزنس کونسل یاور علی ،سی ای او پاکستان بزنس کونسل احسن ملک ، اس ایم منیر،صدر FPCCI دارو خان اچکزئی , سراج قاسم تیلی، صدر کراچی چیمبر آغا شہاب ، عارف حبیب، مرزا افتخار بیگ، خالد مسعود، زاہد سید دیگر شامل تھے۔ وفد سے گفتگو کرتے ہوئے وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ کاروباری طبقہ ملک کی معاشی ترقی میں ایک اہم ستون کا درجہ رکھتا ہے۔ حقیقی ترقی پرائیوٹ سیکٹر کی طرف سے سرمایہ کاری سے ہی ممکن ہے۔ حکومت کا کام کاروباری طبقے کو سازگار ماحول فراہم کرنا ہے۔ حکومت کاروبار میں آسانیاں ( Ease of doing Business) پیدا کرنے پر پوری توجہ دے رہی ہے جس کی تائید عالمی بینک نے بھی کی ہے۔

اس ضمن میں پاکستان دنیا میں 28 درجے اوپر چلا گیا ہے۔وزیر اعظم نے کہا کے معیشت مستحکم ہو رہی ہے اور معاشی اعشاریے بہتری کی طرف جا رہے ہیں۔ بین الاقوامی ادارے بشمول موڈیز نے پاکستان کی معاشی صورتحال کو مستحکم قرار دیا ہے۔ حکومتی معاشی ٹیم انتھک محنت کر رہی ہے اور کاروباری طبقے کے لیے مزید آسانیاں پیدا کرنے میں دن رات مصروف ہے۔ ہمارے دروازے آپ کے لیے ہر وقت کھلے ہیں۔ ہم نے حکومت سنبھالنے کے ساتھ ہی آپ سے مشاورت کا عمل شروع کیا اور یہ سلسلہ آج تک جاری ہے۔ کاروباری شخصیات اور تاجر برادری کی تجاویز حکومت کے لیے اہمیت کی حامل ہیں،غربت میں کمی اور روزگار کے مواقع اسی وقت بڑھ سکتے ہیں جب سرمایہ کار حکومت سے ہاتھ میں ہاتھ ملا کر چلیں۔وزیر اعظم نے کہا کے حکومت ترقیاتی منصوبوں میں بھی پرایئوٹ سیکٹر کو شراکت دار بنانا چاہتی ہے تاکہ ترقی اور عوامی فلاح و بہبود کا عمل ایک ساتھ چلے۔ ہمارے لیے یہ بات خوش ائند ہے کے سرمایہ کار حکومت کے ساتھ مل کر ترقی کے سفر کو آگے بڑھایں۔وفد نے ٹیکس اصلاحات اور دیگر پالیسیز پرمکمل اعتماد کا اظہار کیا۔