کنگ ایڈورڈ میڈیکل یونیورسٹی لاہور کی فیکلٹی کی روبوٹک سرجری میں تاریخی کامیابی۔


لاہور(جنرل رپورٹر)کنگ ایڈورڈ میڈیکل یونیورسٹی لاہور کی فیکلٹی کی روبوٹک سرجری میں تاریخی کامیابی۔
وائس چانسلر کنگ ایڈورڈ میڈیکل یونیورسٹی پروفیسر پروفیسر محمود ایاز جو کہ ربوٹک سرجری میں سرفہرست ہیں اور ربوٹک سرجری کے ساتھ ساتھ ایک معروف جنرل اور لیپروسکوپک سرجن بھی ہیں ان کی سربراہی میں ان کی ماہر ٹیم جس میں شامل پروفیسر وارث فاروقہ اور پروفیسر وسیم حیات خان نے پاکستان میں پہلی روبوٹک ایڈرینالیکٹومی سرجری کامیابی سے سر انجام دی ہے۔ یہ سرجری مرد اور خواتین میں شدید قسم کے کینسر کے تدارک، بے قابو بلیڈ پریشر، ہارمونز کی کمی یا ذیادتی اور خواتین اور مردوں کے پوشیدہ امراض کے تدارک کے لئے فائدہ مند ثابت ہو گی۔
اس موقع پر پروفیسر محمود ایاز کا کہنا تھا کہ اس قسم کی سرجری انسان کے پچاس سے زائد ہارمونز کو بہتر کرنے میں معاون ثابت ہوتی ہے جس کی وجہ سے انسانوں میں مختلف قسم کی ہونے والی غیر ضروری تبدیلیوں کو بھی روکا جاسکتا ہے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ مستقبل میں کنگ ایڈورڈ میڈیکل یونیورسٹی سے ملحقہ میو ہسپتال میں بھی ربوٹک سرجری کا آغاز کیا جائے گا جس کے تحت میو ہسپتال میں آنے والے مریض جدید اور مفت ربوٹک سرجری سے مستفید اور شفایاب ہوں گے انہوں نے مزید کہا کہ میو ہسپتال میں ربوٹک سرجری کے ماہرین موجود ہیں جبکہ حال ہی میں کنگ ایڈورڈ میں سپیشلائزڈ ہیلتھ کیئر اینڈ میڈیکل ایجوکیشن کی جانب سے ایک سے زائد ربوٹک کنسلٹنٹ ماہر تعینات کئے گئے ہیں جن میں ڈاکٹر عمر وڑائچ اور ڈاکٹر عثمان عصمت بٹ شامل ہیں۔ جبکہ پروفیسر وارث فاروقہ کو ان کی خدمات کے اعتراف میں سرگودھا میڈیکل کالج کا پرنسپل اور پروفیسر وسیم حیات خان کو میو کینسر کئیر ہسپتال مناواں کا چیف آپریٹنگ آفیسر تعینات کیا ہے۔ مزید برآں یہ اقدام ملک میں روبوٹک سرجری کے شعبے میں ایک اہم پیش رفت ثابت ہو گا۔