ایم سی سی کرکٹ ٹیم آئندہ سال فروری میں پاکستان کا دورہ کرے گی

میریلیبون کرکٹ کلب (ایم سی سی) کی ٹیم فروری 2020 میں پاکستان کا دورہ کرے گی، کلب نے دورہ پاکستان کی تصدیق کردی ہے۔

چیف ایگزیکٹو پی سی بی وسیم خان کا کہنا ہے کہ ایم سی سی کی دورہ پاکستان پر رضامندی ہمارے اس مؤقف کی تائید ہے کہ پاکستان کرکٹ کی سرگرمیوں کے لیے ایک پُرامن اور محفوظ ملک ہے۔

صدر ایم سی سی کمار سنگاکارا کا کہنا ہے کہ پاکستان میں انٹرنیشنل کرکٹ کی سرگرمیاں بحال کرنے کے لیے پی سی بی سے تعاون کی اشد ضرورت ہے۔

پاکستان کرکٹ بورڈ کے اعلامیہ کے مطابق دورہ پاکستان کے دوران ایم سی سی کرکٹ ٹیم اپنے تمام میچز ایچی سن کالج لاہور میں کھیلے گی۔

ٹیم کی قیادت صدر ایم سی سی کمار سنگا کارا کریں گے۔ گائے لاوینڈر ٹیم منیجر جبکہ اجمل شہزاد کو ہیڈ کوچ مقرر کیا گیا ہے۔
ایم سی سی کرکٹ ٹیم کا یہ 46 برس بعد پاکستان کا پہلا دورہ ہوگا۔ اس سے قبل ایم سی سی کرکٹ ٹیم 1973میں پاکستان آئی تھی۔

ٹیم کے دورہ پاکستان کا فیصلہ ایم سی سی ورلڈ کرکٹ کمیٹی کے اجلاس میں کیا گیا تھا۔ دورے کا مقصد پاکستان میں انٹرنیشنل کرکٹ کی مکمل بحالی میں معاونت کرنا ہے۔

2009 کے بعد پاکستان کرکٹ ٹیم پہلی بار ہوم ٹیسٹ سیریز اپنے ملک میں کھیل رہی ہے۔ آئی سی سی ورلڈ ٹیسٹ چیمپئن شپ میں شامل پاکستان اور سری لنکا کے درمیان جاری سیریز کا پہلا میچ راولپنڈی میں کھیلا گیا جبکہ دوسرا میچ 19 دسمبر سے کراچی میں شروع ہوگا۔

ایم سی سی ورلڈ کرکٹ کمیٹی کا اجلاس رواں سال اگست میں منعقد ہوا تھا۔ لارڈز میں منعقدہ اجلاس کے دوران سیکورٹی صورتحال کو پیش نظر رکھتے ہوئے پاکستان میں کرکٹ کی واپسی کے لیےتعاون کرنے پر تبادلہ خیال کیاگیا۔

اس سلسلے میں چیف ایگزیکٹو پی سی بی وسیم خان نے اجلاس میں شریک اراکین کو پریزینٹیشن بھی دی تھی

لمحہ با لمحہقومی خبریںبین الاقوامی خبریںتجارتی خبریںکھیلوں کی خبریںانٹرٹینمنٹصحتدلچسپ و عجیبخاص رپورٹ

میریلیبون کرکٹ کلب (ایم سی سی) کی ٹیم فروری 2020 میں پاکستان کا دورہ کرے گی، کلب نے دورہ پاکستان کی تصدیق کردی ہے۔

چیف ایگزیکٹو پی سی بی وسیم خان کا کہنا ہے کہ ایم سی سی کی دورہ پاکستان پر رضامندی ہمارے اس مؤقف کی تائید ہے کہ پاکستان کرکٹ کی سرگرمیوں کے لیے ایک پُرامن اور محفوظ ملک ہے۔

صدر ایم سی سی کمار سنگاکارا کا کہنا ہے کہ پاکستان میں انٹرنیشنل کرکٹ کی سرگرمیاں بحال کرنے کے لیے پی سی بی سے تعاون کی اشد ضرورت ہے۔

پاکستان کرکٹ بورڈ کے اعلامیہ کے مطابق دورہ پاکستان کے دوران ایم سی سی کرکٹ ٹیم اپنے تمام میچز ایچی سن کالج لاہور میں کھیلے گی۔

ٹیم کی قیادت صدر ایم سی سی کمار سنگا کارا کریں گے۔ گائے لاوینڈر ٹیم منیجر جبکہ اجمل شہزاد کو ہیڈ کوچ مقرر کیا گیا ہے۔

ایم سی سی کرکٹ ٹیم کا یہ 46 برس بعد پاکستان کا پہلا دورہ ہوگا۔ اس سے قبل ایم سی سی کرکٹ ٹیم 1973میں پاکستان آئی تھی۔

ٹیم کے دورہ پاکستان کا فیصلہ ایم سی سی ورلڈ کرکٹ کمیٹی کے اجلاس میں کیا گیا تھا۔ دورے کا مقصد پاکستان میں انٹرنیشنل کرکٹ کی مکمل بحالی میں معاونت کرنا ہے۔

2009 کے بعد پاکستان کرکٹ ٹیم پہلی بار ہوم ٹیسٹ سیریز اپنے ملک میں کھیل رہی ہے۔ آئی سی سی ورلڈ ٹیسٹ چیمپئن شپ میں شامل پاکستان اور سری لنکا کے درمیان جاری سیریز کا پہلا میچ راولپنڈی میں کھیلا گیا جبکہ دوسرا میچ 19 دسمبر سے کراچی میں شروع ہوگا۔

ایم سی سی ورلڈ کرکٹ کمیٹی کا اجلاس رواں سال اگست میں منعقد ہوا تھا۔ لارڈز میں منعقدہ اجلاس کے دوران سیکورٹی صورتحال کو پیش نظر رکھتے ہوئے پاکستان میں کرکٹ کی واپسی کے لیےتعاون کرنے پر تبادلہ خیال کیاگیا۔

اس سلسلے میں چیف ایگزیکٹو پی سی بی وسیم خان نے اجلاس میں شریک اراکین کو پریزینٹیشن بھی دی تھی۔

جنگ نیوز
چیف ایگزیکٹو پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) وسیم خان
اجلاس میں اتفاق کیا گیا تھا کہ پاکستان میں سیکورٹی صورتحال کا جائزہ لینے کے بعد ایم سی سی کرکٹ ٹیم پاکستان کا دورہ کرے گی۔ اس دوران پاکستان کرکٹ بورڈ کی جانب سے ایم سی سی کرکٹ ٹیم کو آئندہ سال فروری میں دورہ پاکستان کی دعوت دی گئی تھی۔

چیف ایگزیکٹو پی سی بی وسیم خان نے کہا ہے کہ طویل مشاورت اور مربوط حکمت عملی کے تحت ایم سی سی ورلڈ کرکٹ کمیٹی کے اجلاس میں پاکستان کا مؤقف پیش کیا گیا، خوشی ہے کہ ایم سی سی کرکٹ ٹیم فروری 2020 میں لاہور پہنچے گی
انہوں نے کہا کہ پاکستانی عوام شدت سے ملک میں ٹیسٹ کرکٹ کی واپسی کی منتظر تھی۔

چیف ایگزیکٹو اور سیکریٹری ایم سی سی نے کہا کہ بطور کلب، ایم سی سی دنیا بھر میں کرکٹ کے فروغ کو ترجیح دیتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ میریلیبون کرکٹ کلب غیرملکی ٹیموں کو پاکستان کا دورہ کرتا دیکھنے کا خواہشمند ہے۔

ایم سی سی کیا ہے؟

ایم سی سی دنیائے کرکٹ کا سرگرم ترین کلب ہے جو لارڈز گراؤنڈ کا مالک ہونے کے ساتھ ساتھ کھیل کے قوانین اور اسپرٹ آف دی گیم کا محافظ بھی ہے۔

1787 میں قائم کردہ کلب 1814 میں سینٹ جونز ووڈ منتقل ہوا۔

کلب کے مستقل اراکین کی تعداد تقریباً اٹھارہ ہزار جبکہ ایسوسی ایٹ اراکین کی تعداد پانچ ہزار ہے