وکلا کا پی آئی سی میں دھاوا،علاج نہ ملنے پر خاتون انتقال کر گئی

لاہور میں وکلا اور ڈاکٹرز کا تنازع شدت اختیار کر گیا،وکلا نے پنجاب انسٹیٹیوٹ آف کارڈیالوجی لاہور کے باہر ڈاکٹرز کے خلاف احتجاج کیا،جبکہ مشتعل وکلا پی آئی سی کا مرکزی دروازہ زبردستی کھول کر وارڈز میں داخل ہو گئے۔وکلا نے ایم ایس کے آفس پر پتھراؤ بھی کیا اور بعض وکلا ہاتھوں میں ڈنڈے لیے توڑ پھوڑ کرتے رہے ۔تاہم وکلا نے صحافیوں سے بھی بدتمیزی کی اور ان کے کیمرہ اور موبائل فونز بھی چھین لیے ،وکلا نے نجی ٹی وی کی خاتون رپورٹر سے موبائل فون بھی چھین لیا،وکلا نے لابی میں گھس کر توڑ پھوڑ بھی کی ۔تاہم پولیس خاموش تماشائی بنی رہی جبکہ وکلا گردی پر پنجاب حکومت بھی مسلسل خاموش ہے ۔
وکلا نے وارڈز کے اندر موجود ڈاکٹرز پر بھی تشدد کیا،جس کے بعد ایمرجنسی بند کر دی گئی اور آپریشن روک دیا گیا۔وکلا کے پی آئی سی پر دھاوا بولنے کے باعث علاج نہ ملنے کے باعث خاتون انتقال کر گئی۔علاوہ ازیں پی آئی سی کے ایمرجنسی وارڈ میں ایک شخص بے حوش ہو گیا جبکہ متعدد مریضوں کی حالت بگڑ گئی