پاکستان اور سعودی عرب کے مابین تعاون بڑھانے پر تبادلہ خیال

جدہ  (امیر محمدخان سے ) پاکستان کے قونصل جنرل خالد مجید نے چیئرمین، سعودی – پاک انڈسٹریل اینڈ ایگریکلچر انویسٹمنٹ کمپنی (ایس پی آئی اے آئی سی)، جناب سلطان محمد حسن عبد الرؤف سے  اپنے دفتر میں ملاقات کی اور پاکستان اور سعودی عرب کے مابین تعاون بڑھانے پر تبادلہ خیال کیا،۔  نئے چیئرمین کی حیثیت سے حالیہ تقرری پر مسٹر سلطان کو مبارکباد دیتے ہوئے، قونصل جنرل نے دونوں برادر ممالک کے مابین تجارت اور سرمایہ کاری کے تعلقات کو مستحکم کرنے میں ایس پی آئی اے سی کے اہم کردار کا ذکر کیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان اور سعودی عرب کے مابین پٹرولیم مصنوعات میں 3.4 بلین امریکی ڈالر کی تجارتی حجم دونوں ممالک کے مابین مضبوط تعلقات کی صحیح عکاس نہیں ہے اور  ابھی  بہت سارے مواقع موجود ہیں، جن میں تاجروں اور سرمایہ کاروں کو سہولیات فراہم کرتے ہوئے دونوں ممالک کے نجی شعبوں کے مابین ایس پی آئی اے آئی سی پلیٹ فارم کو بروئے کار لایا جا سکتا ہے۔سلطان عبد الرؤف نے  گرم جوش استقبال پر قونصل جنرل کا شکریہ ادا کیا اور دو طرفہ تجارت اور سرمایہ کاری کے فروغ کے لئے ان کے فعال طرز عمل اور وژن کو سراہا۔ انہوں نے بتایا کہ سعودی وزارت خزانہ نے انہیں جو مینڈیٹ دیا ہے وہ ایس پی آئی اے سی کو ایک نئی پہچان دے گی۔  انہوں نے اس تنظیم میں  جدید خطوط پر خدمات متعارف کروا کر نجی شعبے کی بہترین خدمت کرنے کا اظہار کیا۔ انہوں نے وژن 2030 اور ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کی معیشت میں اہم شراکت دار کے طور پر نجی شعبے کو متحرک کرنے کی دلچسپی کے تحت مثبت طور پر بدلنے والی سعودی معیشت کا بھی ذکر کیا۔ سلطان عبد الرؤف نے مزید کہا کہ وہ دونوں ممالک  میں تجارت اور سرمایہ کاری بڑھانے  کے لئے نئے منصوبوں پر کام کررھے ھیں۔ اس میں، پاکستان میں زراعت کے شعبے میں سعودی خرید و فروخت اور  سرمایہ کاری اولین ترجیح ہوگی۔اجلاس میں کاروباری افراد اور سرمایہ کاروں کی سہولت کے لئے متعدد تجاویز پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ سلطان عبد الرؤف دسمبر کے آخری ہفتے میں مختلف تجارتی اداروں سے ملنے پاکستان جائیں گے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں