مصباح الحق پر ذمہ داریاں زیادہ ہیں، مدثر نذر

پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) کے ڈائریکٹر اکیڈمیز مدثر نذر نے کہا ہے کہ ماضی میں اس سے بھی زیادہ تگڑی ٹیمیں آسٹریلیا گئیں لیکن وہ جیت کر نہ آئیں۔ میری ذاتی رائے میں مصباح الحق پر ذمہ داریاں زیادہ ہیں۔

مدثر نذر کا کہنا ہے کہ بہت ینگ ٹیم آسٹریلیا بھیجی گئی، چند سینئر کھلاڑیوں نے غلط وقت پر ریٹائرمنٹ لی، اچھا ہوتا محمد عامر اور وہاب ریاض اس سیریز کے بعد ٹیسٹ کرکٹ چھوڑتے۔

انہوں نے کہا کہ گزشتہ ایک دو سال سے اظہر علی کی پرفارمنس کچھ خاص نہیں ہے۔

یہ بھی پڑھیے: اظہر علی کا تینوں شعبوں میں ناکامی کا اعتراف

مدثر نذر کا مزید کہنا تھا کہ سری لنکا کی پوری ٹیم آرہی ہے، پاکستان کے لیے یہ سیریز بھی مشکل ہوگی، اگر یاسر شاہ کو سری لنکا کے خلاف کھلایا گیا تو ہوم گراؤنڈ کا فائدہ ہوگا۔

دوسری جانب سابق ٹیسٹ اسپنر اقبال قاسم کا کہنا ہے کہ کپتانی اتنی آسان نہیں ہے مجھے تو اظہر علی کا ایسا کوئی کردار نظر نہیں آیا، اُن کے پاس جتنا میٹریل ہے اس سے جتنی کپتانی کرسکتے تھے انہوں نے کی۔

اقبال قاسم کا مزید کہنا تھا کہ اظہر علی کی خود فارم نہیں تو وہ کپتانی کیا کریں گے۔

برسبین ٹیسٹ میں اننگز اور پانچ رنز سے شکست کے بعد آسٹریلیا نے ایڈیلیڈ ٹیسٹ میں بھی پاکستان ٹیم کو آؤٹ کلاس کرتے ہوئے اننگز اور 48 رنز سے اپنے نام کرلیا ہے۔

یہ بھی پڑھیے: ایڈیلیڈ میں پاکستان کو اننگز اور 48 رنز سے شکست

پاکستانی بیٹسمینوں کی ناکامی کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ ٹیسٹ کی دوسری اننگ میں بھی کپتان سمیت 6 کھلاڑی ڈبل فیگر میں اسکور نہیں کرسکے تھے۔

آسٹریلیا میں وائٹ واش شکست کے بعد پاکستان ٹیم کے کپتان اظہر علی نے کھیل کے تینوں شعبوں میں ناکامی کا اعتراف کیا ہے۔

یہ بھی پڑھیے: برسبین ٹیسٹ اننگز اور پانچ رنز سے آسٹریلیا کے نام

اظہر علی کا کہنا ہے کہ ہم نے بیٹنگ، بولنگ اور فیلڈنگ میں ناقص کارکردگی کا مظاہرہ کیا۔

انہوں نے آسٹریلیا کو جیت پر مبارکباد دیتے ہوئے آسٹریلین اوپنر ڈیوڈ وارنر کے کھیل کی تعریف کی۔