اداروں کے درمیان کبھی تصادم نہیں ہوگا: عمران خان

وزیر اعظم عمران خان نے اسلام آباد میں افریقی ممالک کے سفیروں کی کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ امریکہ میں تعینات کیے گئے ڈپلومیٹ کی تعریف بیرون ملک کی جا رہی ہے۔ ہم نے قابل لوگوں کو اداروں میں تعینات کرنے کی کوشش کی، اس سے قبل نااہل لوگوں کو اداروں میں اہم ذمہ داریوں پر بٹھایا گیا تھا۔ میرٹ کی بالادستی ہی ہماری پالیسی ہے۔انہوں نے کہا کہ پاکستانی سفیروں کی کارکردگی ہر جگہ بہترین ہے۔ وقت کے ساتھ ساتھ میرٹ کی بالادستی ختم ہونے سے ادارے کمزور ہوئے۔ چین نے میرٹ کی پالیسی پر عملدرآمد کر کے ترقی کی۔ سیاسی بنیادوں پر تعیناتی کی وجہ سے ادارے تباہ ہوئے۔
عمران خان نے کہا کہ کرنٹ اکاؤنٹ خسارے کے خاتمے کے لیے ایکسپورٹ میں اضافہ ضروری ہے اور بیرون سرمایہ کاری ا?نے سے ہی کرنٹ اکاؤنٹ خسارے کا خاتمہ ہوتا ہے۔ کرنٹ اکاؤنٹ خسارے کی وجہ سے ملک غربت کی طرف چلا جاتا ہے اور سرمایہ کاری نہیں ہوتی۔انہوں نے کہا کہ ملک میں مالی خسارے کے باعث روپے کی قدر میں کمی ہوئی۔ بیرون ملک مقیم پاکستانی ہمارا اثاثہ ہیں۔وزیر اعظم نے کہا کہ گزشتہ دنوں ملک کو غیر مستحکم کرنے کی کوشش کی گئی اور دھرنے کو ہندوستانی میڈیا نے بھی بہت اٹھایا جبکہ اب سپریم کورٹ میں جو کیس لگا ہوا تھا اس پر بھی بھارت بہت خوش تھا اور اسے امید تھی کہ اداروں میں تصادم ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان ایک مشکل وقت سے نکل کر اب آگے بڑھ رہا ہے اور اسے کوئی آگے بڑھنے سے روک نہیں سکے گا۔