قومی ادارہ برائے امراض قلب کے انچارج پریکیومنٹ خرم حسن خان پر بدترین تشدد

قومی ادارہ برائے امراض قلب کے انچارج پریکیومنٹ خرم حسن خان پر بدترین تشدد  سیپرا کے قوانین کے برخلاف من پسند افراد کو ٹھیکے دینے سے انکار پر انچارج پریکیومنٹ پر تشدد اور جان سے مارنے کی دھمکیاں دی گئیں   انچار نے بھاگ کر چیف سیکیورٹی آفیسر کے دفتر میں پناہ لی  چیف سیکیورٹی آفیسر کے دفتر پر بھی دھاوا  چیف سیکیورٹی آفیسر کرنل لطیف ڈار نے پولیس کو طلب کر لیا  واقعے پر صدر تھانے ایف آئی آر کے اندراج کے لئے رابطہ  خرم حسن خان صدر تھانے میں اپنا بیان ریکارڈ کرا رہے ہیں  ایم ایل او رپورٹ کے بعد ایف آئی آر درج کی جائے گی  اس سے قبل بھی چھ ہزار روپے کی بیٹری 60 ہزار روپے میں خریدنے سے انکار پر تشدد کیا گیا تھا  ملازمین سراپا احتجاج

اپنا تبصرہ بھیجیں