فکر اقبال سے نوجوانوں میں جذبہ خودی کو اجاگر کرنا ہماری ذمہ داری ہے، محفوظ یار خان

فکر اقبال سے نوجوانوں میں جذبہ خودی کو اجاگر کرنا ہماری ذمہ داری ہے، محفوظ یار خان علامہ اقبال نے ہمیشہ نوجوانوں کو جگانے کی کوشش کی ہے، کیپٹن ایم ضیاء عالم یوم اقبال کے سلسلے میں سوشل فورم کے زیرِ اہتمام تقریری مقابلے سے سلطان مسعود شیخ، اقبال یوسف، انجینئر وسیم فاروقی، نفیس احمد خان، مسعود احمد وصی اور نوشابہ صدیقی کا خطاب
کراچی ( ) فکرِ اقبال سے نوجوانوں میں جذبہ خودی کو اجاگر کرنا ہم سب کی ذمہ داری ہے۔ یہ بات سوشل اسٹوڈنٹس فورم کے زیرِ اہتمام سرسید یونیورسٹی انجینئرنگ اینڈ ٹیکنالوجی کے تعاون سے منعقدہ تقریری مقابلے بعنوان ’’اپنی دنیا آپ پیدا کر اگر زندوں میں ہے‘‘ سے بحیثیت صدر تقریب سابق ممبر صوبائی اسمبلی محفوظ یار خان نے کہی۔ انہوں نے کہا کہ علامہ اقبال کی شاعری میں نواجوانوں اور مسلمانوں کیلئے جذبہ خودی ، ایثار ، قربانی اور آگے بڑھنے اور دنیا فتح کرنے کا جذبہ اور سبق موجود ہے اگر ہمارے نوجوان ترقی کرنا چاہتے ہیں تو دین و دنیا دونوں میں کامیابی حاصل کرسکتے ہیں۔ جس کی مثال ’’اپنی دنیا آپ پیدا کر اگر زندوں میں ہے!‘‘قبل ازیں فورم کے چیئرمین نفیس احمد خان نے خطبہ استقبالیہ پیش کرتے ہوئے کہا کہ ہم اپنے اسلاف کی تاریخ کو دہراتے ہیں تاکہ ہمارے نوجوان و طلباء ان سے سبق حاصل کریں۔ ان کے کامیاب اصولوں پر اپنی زندگی کا آغاز کریں اور کامیابی حاصل کریں۔ فورم کے سینئر وائس چیئرمین مسعود احمد وصی نے فورم کے اغراض و مقاصد بیان کیے۔ مہمانِ خصوصی کیپٹن ایم ضیاء عالم نے کہا کہ فورم کی خدمات قابل تقلید اور قابل تحسین ہیں۔ جوہر قومی دن اور قومی شخصیات کے حوالے سے تقریبات کا انعقاد کرتے ہیں، قابل مبارکباد ہیں۔ وزیر اعلیٰ کے سابق مشیر اقبال یوسف نے کہا کہ علامہ اقبال کی پوری زندگی فکر نو اور فکر فردا اور فکر نوجواں میں گزری ہے۔ آپ کے اشعار زندگی جینے کا درس دیتے ہیں۔ تقریب سے سلطان مسعود شیخ، نوشابہ صدیقی، زاہد حسین، انجینئر وسیم احمد فاروقی نے بھی خطاب کیا۔ منصفین زاہد حسین، شاہد مسرور کے مطابق اوّل محمد محسب، دوئم محمد بن یاسر، سوئم ملائکہ قریشی جبکہ خصوصی انعام حذیفہ راشد نے حاصل کیا۔ میزبانی کے عمدہ فرائض مس جبیں زاہد نے انجام دیئے جبکہ مہمانوں کا شکیہ ایڈیشنل سیکریٹری قیصل جمال نے ادا کیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں