سندھ حکومت نے تمام لینڈ ہولڈنگ ڈپارٹمنٹ اور اینجنسیوں کے درمیان ای ۔ نیٹ ورکنگ قائم کرنے کا فیصلہ

سندھ حکومت نے تمام لینڈ ہولڈنگ ڈپارٹمنٹ اور اینجنسیوں کے درمیان ای ۔ نیٹ ورکنگ قائم کرنے کا فیصلہ کیا ہے تاکہ سرمایہ کاروں کو زمین کے رکارڈ کی تصدیق آسانی کے ساتھ ہوسکے۔ یہ فیصلہ وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ اور ورلڈ بینک کے وفد جسکی قیادت اسکی نائب صدر ای ایف آئی مس سیلہ پیزر بیسیگلو کررہی تھیں کے ساتھ وزیراعلیٰ ہاؤس میں فالواپ اجلاس میں کیا گیا۔ عالمی بینک کے وفد کے اراکین میں سید شبیہ علی محیب ، محمد وحید اور امجد بشیر شامل تھے۔ اجلاس میں چیف سکریٹری ممتاز شاہ ، چیئر پرسن پی اینڈ ڈی ناہید شاہ ، وزیراعلیٰ سندھ کے پرنسپل سکریٹری ساجد جمال ابڑو ، سیکرٹری خزانہ حسن نقوی اور سیکرٹری سرمایہ کاری احسن منگی بھی موجود تھے۔ ورلڈ بینک کی نائب صدر اور انکی ٹیم نے صوبائی حکومت کو تجویز دی کہ وہ سرمایہ کاروں کو انکے کاروبار شروع کرنے کے حوالے سے سرکار این او سیز حاصل کرنے کو مزید سہل بنائیں۔ انھوں نے کہا کہ سرمایہ کاروں کو این او سیز کے حصول کے لیے مختلف محکموں میں نہیں جانا چاہیے۔ انھوں نے کہا کہ سرمایہ کاروں کو صرف محکمہ سرمایہ کاری سے بزنس کے لیے رجوع کرنا چاہیے اور محکمہ سرمایہ کاری کو چاہیے کہ وہ تمام متعلقہ محکموں اور اینجسیز سے این او سی جاری کرائیں اور کلیئرنس حاصل کریں۔ وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ این او سی کے اجراء میں تاخیر مختلف لینڈ ہولڈنگ ڈپارٹمنٹ اور ایجنسیوں کے باعث ہوتی ہے لہٰذہ وزیراعلیٰ سندھ نے محکمہ سرمایہ کاری کو ہدایت کی کہ وہ تمام لینڈ ہولڈنگ اینجنسیوں کے مابین ایک ای نیٹ ورکنگ سسٹم ڈیولپ کریں تاکہ محکمہ سرمایہ کاری انھیں این او سی کے لیے تحریر کرسکیں۔ وزیراعلیٰ سندھ نے چیف سیکریٹری کو بھی ہدایت کی کہ وہ سب رجسٹرار کی سطح پر اصلاحات لائیں تاکہ املاک کی رجسٹریشن، ٹرانسفر اور نیوٹریشن کے مسائل ایک دن کے اندر حل ہوسکیں۔ ورلڈ بینک کے وفد نے سندھ میں کاروبار کو سہل بنانے کے حوالے سے وزیراعلیٰ سندھ کی ذاتی دلچسپی اور کاوشوں کو سراہا۔ سندھ حکومت کی جانب سے ایس بی سی اے نے شروع کئے گئے پورٹل کے اچھے نتائج سامنے آئے ہیں مگر ابھی بھی صوبائی حکومت کو اسکی نیٹورکنگ کو مزید توسیع دینے کی ضرورت ہے ۔ ورلڈ بینک کے وفد نے سندھ حکومت کو نیٹورکنگ کے ڈیولپنگ میں فنی معاونت کی فراہمی کا یقین دلایا۔ اجلاس میں سندھ ریونیو بورڈ کی ٹیکس سلیکشن کے حوالے سے کارکردگی کو بھی سراہا گیا۔ اور کہا گیا کہ یہ ایک نہایت مؤثر کاروباری دوستانہ ٹیکس جمع کرنے والا ادارہ ثابت ہوا ہے۔ اجلاس میں پیپلز پارٹی کی جانب سے عام انتخابات میں اعلان کیئے گئے منشور کے تحت سماجی تحفظ کے نظام کو مؤثر طریقے سے آگے بڑھانے کو بھی سراہا گیا ۔ منشور کے تحت خواتین کو بااختیار بنایا گیا ہے اور کاٹیج انڈسٹری کے لیے ایڈوانس ، چھوٹے قرضے ، غربت کے خاتمہ کے پروگرام ، فوڈ سیکیورٹی ،ہیلتھ پروگرام وغیرہ شامل ہیں۔ وزیراعلیٰ سندھ نے ورلڈ بینک کی جانب سے سندھ میں واٹر سیکٹر پراجیکٹ میں تعاون، بشمول دیہی معیشت کی بہتری کے لیے سکھر اور گڈو بیراجوں کی بحالی اور واٹر بورڈ کے اصلاحاتی پروگرام میں تعاون کرنے پر انکا شکریہ ادا کیا۔
عبدالرشید چنا
میڈیا کنسلٹنٹ وزیراعلیٰ سندھ