جامعہ ہمدرد کے مرکزی کیمپس میں ” علوم دواسازی کا تحقیقی نقطہ نظر۔ صنعتوں میں بنتی ہوئی نئی مثالیں اور تعلیمی تعاون ” کے موضوع پر پہلی تین روزہ بین الاقوامی کانفرنس

 کلیۂ  دوا سازی کے زیر انتظام سہ روزہ بین الاقوامی کانفرنس ” علوم دواسازی کا تحقیقی نقطہ نظر۔ صنعتوں میں بنتی ہوئی نئی مثالیں اور تعلیمی تعاون”بہ اشتراک بین الاقوامی مرکز برائے کیمیائی و حیاتیاتی علوم اور سائنسی و تکنیکی مرکز معلومات پاکستان (پاسٹک)  کلیۂ دواسازی، جامعہ ہمدرد نے بین الاقوامی مرکز برائے کیمیائی و حیاتیاتی علوم اور سائنسی و تکنیکی مرکز معلومات پاکستان (پاسٹک) کے تعاون سے 23 اکتوبر 2019 کو جامعہ ہمدرد کے مرکزی کیمپس میں ” علوم دواسازی کا تحقیقی نقطہ نظر۔ صنعتوں میں بنتی ہوئی نئی مثالیں اور تعلیمی تعاون ”  کے موضوع پر پہلی تین روزہ بین الاقوامی کانفرنس کا انعقاد ہوا۔  پاکستان اور دنیا کے دوسرے ممالک کی معتبر اور مستند جامعات سے شرکت کرنے والے جن مہمانوں نے تقریب کے وقار میں اضافہ کیا ان میں ڈاکٹر راجر فلپ (ہالینڈ) پروفیسر ہشام السعیدی (سویڈن) قومی جامعات اورصنعت دواسازی کے معززین شامل تھے۔ امیر جامعہ ہمدرد محترمہ سعدیہ راشد صاحبہ  نے اپنے خطاب میں فرمایا کہ شہید حکیم محمد سعید صاحب کے  مشن کے مطابق  جامعہ ہمدرد  اعلیٰ تعلیم کے فروغ کے لیئے  سہولت فراہم کرتی رہے گی، خصوصاً صحت، طب مشرقی اور ادویہ سازی کے علوم میں۔  اس کانفرنس کا موضوع جامعہ کی اسی حوالے سے کی جانیوالی مستقل کاوشوں کا مظہر ہے۔ کثیر الجہتی پلیٹ فارم سے باہمی تعاون کے ساتھ تحقیق کی ضرورت کو اجاگر کرنے پر کانفرنس کے منتظمین کو مبارک باد دی۔ شیخ الجامعہ پروفیسر ڈاکٹر سید شبیب الحسن اور رئیس کلیۂ دواسازی ڈاکٹر اظہر حسین نے بھی کانفرنس کے موضوع کے حوالے سے تقریب سے خطاب کیا۔  شریک  رئیس  علوم دواسازی ڈاکٹر شمیم اختر نے تحقیق کی بڑھتی ہوئی ضروریات کو پورا کرنے کے لیئے قومی اور بین الاقوامی تعاون سے تعلیمی نصاب کو جدید بنانے  کی اہمیت کو اجاگر کیا۔ سویڈن سے آئے ہوئے مہمان ہشام السعیدی نے اسلامی طریقہ طب کے فروغ پر زور دیا۔  ڈاکٹر محمد نے زیابطیس کے علاج کے حوالے سے اپنے تجربات سے شرکاء کو  آگاہ کیا۔ کانفرنس کے دوسرے روز ڈاکٹر عدنان رضوی، جناب طاہر احمد، سید قلب حسن رضوی، ڈاکٹر فخشینہ انجم نے پینل کی صورت میں حاضرین کو انتہائی اہم معلومات فراہم کیں اور ایم فل اور ڈاکٹریٹ کے طلباء نے اپنی تحقیق کے حوالے  سے معلومات پر مبنی ذبانی نتائج پیش کیئے۔ تیسرے اور آخری روز ڈاکٹر راجر رفلپ نے اجلاس کی صدارت کی اور خطاب کیا۔ بعد ازا  ڈاکٹر عبدالطیف، ڈاکٹر لید ندیم، ڈاکٹر عبداللہ دایو، ڈاکٹر جبرن یوسف، ڈاکٹر ہما شریف،  ڈاکٹر عمایمہ مزّمل، ڈاکٹر ریاض الحق اور ڈاکٹر سنبل شمیم نے مختلف پینل کے مباحث میں حصہ لیا۔ کانفرنس کی سیکرٹری اور منظم ڈاکٹر شمیم اختر، معاون ڈین دواسازی نے اپنے خطاب میں مہمانوں کا شکریہ ادا کیا۔ 

اپنا تبصرہ بھیجیں