ماہی گیروں کی فلاح و بہبود کے لئے سردار کامران لاسی سرگرم عمل

بلوچستان فشر مین کوآپریٹیو سوسائٹی کے نومنتخب چیئرمین سردار کامران لاسی ماہی گیروں کی فلاح و بہبود کے لئے خوشیاں اور سرگرم عمل ہیں وہ پرعزم ہیں کہ ماہی گیروں کو تمام مطلوبہ سہولتوں کی فراہمی کے لئے تمام وسائل بروئے کار لائیں گے اور بھرپور اقدامات اٹھائیں گے ۔
اپنے عہدے کا چارج سنبھالنے کے بعد سردار کامران لا سی کا کہنا ہے کہ بلوچستان کے ماہی گیروں کی فلاح و بہبود کے لیے بلوچستان حکومت مثبت اقدامات کر رہی ہے اب کو سے لے کر جوانی کے ساحلی علاقے میں پھیلے ہوئے بلوچستان پوسٹ کی ماہی گیری کے اسٹیشنوں میں لینڈنگ جیٹیز کی تعمیر کے ساتھ ساتھ ماہی گیروں کو سہولیات کی فراہمی کے علاوہ ان کے بچوں کو تعلیم اور صحت کی سہولتوں کی فراہمی یقینی بنائی جائے گی ان کا کہنا ہے کہ وزیر اعلی بلوچستان ماہیگیروں کے ذریعہ معاش کو تحفظ فراہم کرنے کے لیے ہنگامی اقدامات کر رہے ہیں ۔
انہوں نے سومیانی بندر اور دیگر مقامات کا دورہ بھی کیا اور مختلف جگہوں پر ماہی گیروں سے ملاقاتیں بھی کی ہیں جبکہ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ ماہی گیروں کی فلاح و بہبود کے لئے جتنے ممکن ہونگے اقدامات کئے جائیں گے کوئی کسر نہیں اٹھا رکھی جائے گی ۔انہوں نے کہا کہ ماضی میں ماہی گیروں کو مختلف و معاملات میں مسائل اور مشکلات کا سامنا رہا اور ان کے مسائل پر وہ توجہ نہیں دی گئی جس کی ضرورت تھی لیکن اب ان کے مسائل کو نظر انداز نہیں ہونے دیا جائے گا وزیراعلیٰ بلوچستان نے اس حوالے سے خصوصی ہدایات جاری کر رکھی ہیں اور ان کو ماہی گیروں کے مسائل کا پوری طرح
علم ہے اور احساس ہے
انہیں اس بات کا احساس ہے کہ لسبیلہ ڈام بندر گاہ کے قریب بسنے والے ماہی گیر شدید مسائل کا شکار ہیں طبی سہولیات کے فقدان سے ماہی گیروں کے مسائل میں اضافہ ہوا ہے ۔ماہی گیروں کا معاشی استحصال بھی ہو رہا ہے کیونکہ باہر سے دیوہیکل گراتے ہیں اور ساری مچھلی پکڑ کر لے جاتے ہیں ۔اس پہ لگا کراچی سے سارا سال والا جاری ہوتے ہیں ان کے پاس بنیادی طور پر جھینگے کے شکار کا جا لائسنس ہوتا ہے لیکن وہ بھی bottom سے مچھلی کا شکار کر لیتے ہیں .جس میں سب سے زیادہ نقصان مقامی ماہی گیروں کو ہورہا ہے کیونکہ مچھلی کی نسل کشی ہورہی ہے