آصف زرداری اور فریال تالپور کے جوڈیشل ریمانڈ میں 12 نومبر تک توسیع

پارک لین ریفرنس کی سماعت میں احتساب عدالت نے سابق صدر آصف زرداری اور ان کی ہمشیرہ فریال تالپور کے جوڈیشل ریمانڈ میں 12 نومبر تک توسیع کردی۔ آصف زرداری اور ان کی ہمشیرہ فریال تالپور کیخلاف پارک لین ریفرنس کی سماعت اسلام آباد کی احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے کی۔ عدالت  نے استفسار کیا کہ دیگر ملزمان کہا ں ہیں جس پر  پولیس نے مؤقف اپنایا کہ  ملزمان جیل میں ہیں،انور مجید کی طبیعت ناساز ہے اور ڈاکٹرز نے انہیں فضائی سفر سے منع کیا ہوا ہے،جس پر نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ ہر بار عدالت کو ایک رپورٹ پیش کر دی جاتی ہے۔ وکیل فاروق ایچ نائیک نے مؤقف اپنایا کہ آصف زرداری کو جیل میں ذاتی مشقتی فراہم کیا جائے، جیل میں مشقتی صرف جیل میں موجود کسی قیدی کو ہی فراہم کیا جاتا ہے،ایسا نہیں ہوتا کہ باہر سے کسی کو لا کر جیل میں مشقتی رکھ لیا جائے، ایسے تو یہ کسی کی بیوی بھی کہہ دے گی کہ جیل میں خدمت کرنے دیں۔عدالت نے زرداری کی جیل سہولیات سے متعلق ایک آرڈر بھی کیا تھا اورعدالت نے آصفہ بھٹو کی توہین عدالت کی درخواست پر رپورٹ مانگی تھی، میں نے آصفہ بھٹو کو روکا ہے،آصفہ بھٹو جذباتی تھیں کہ کیوں عدالتی احکامات پر عمل نہیں ہو رہا۔جس پر احتساب عدالت نے جعلی اکاونٹس اورپارک لین کیس کی سماعت ملتوی کرتے ہوئے آصف زرداری اور فریال تالپور کے جوڈیشل ریمانڈ میں 12 نومبر تک توسیع کرتے ہوئے آصف زرداری اور فریال تالپور کو 12 نومبر کو پیش کرنے کا حکم دے دیا

اپنا تبصرہ بھیجیں