بریگزٹ ڈیل:28 باغی ارکان کا بورس جانس کی ڈیل کے حق میں ووٹ کا فیصلہ

برطانوی پارلیمنٹ کا اہم اجلاس ہوا جس میں یورپی یونین سے علیحدگی کے معاہدے پر بحث ہوئی اور یورپی یونین سے انخلا کےمعاملے پر کنزرویٹو پارٹی کے 28 باغی ارکان نے وزیراعظم بورس جانس کی ڈیل کے حق میں ووٹ کا فیصلہ کر لیا۔کنزرویٹو پارٹی کے 28 باغی ارکان نے سابق وزیراعظم ٹریزا مے کی ڈیل کے خلاف ووٹ دیا تھا تاہم اب28 باغی ارکان کے ووٹ ملنے پر بورس جانسن کی ڈیل کامیاب ہونے کے امکانات روشن ہو گئے ہیں اور کنزرویٹو کے 28 باغی ووٹوں میں سے چند ووٹ نہ ملنے پر بورس جانسن ووٹنگ میں ناکام بھی ہو سکتے ہیں۔کچھ عرصہ قبل برطانوی وزیراعظم بورس جانسن نے کہا تھا کہ یورپی یونین کے ساتھ نئے بریگزٹ معاہدے پر اتفاق ہو گیا ہے ۔ نئے معاہدے پر برطانیہ اور یورپی یونین کی پارلیمنٹ سے منظوری درکار ہو گی،ہم نے بہترین ڈیل کی ہے جس سے معاملات ہمارے ہاتھ میں آگئے ہیں۔خیال رہے کہ وزارت عظمیٰ کا عہدہ سنبھالتے ہی بورس جانسن نے کہا تھا کہ اب چاہے کچھ بھی ہو برطانیہ 31 اکتوبر کو یورپی یونین سے علیحدہ ہوجائے گا۔ڈیوڈ کیمرون کے استعفے کے بعد برطانیہ کی وزیراعظم بننے والی ٹریسامے نے جولائی میں بریگزٹ ڈیل کی پارلیمنٹ سے منظوری میں ناکامی کے بعد مستعفی ہونے کا اعلان کیا تھا اور ان کے بعد بورس جانسن نے عہدہ سنبھالا تھا۔ 

اپنا تبصرہ بھیجیں