کراچی ماسٹر پلان “2047

 سندھ حکومت کی جانب سے کراچی کانفرنس کا انعقاد
سندھ حکومت کی جانب سے  کراچی کانفرنس کا انعقاد
کراچی ماسٹر پلان اور تاریخی میوزیم اور پارکوں کی بحالی کے متعلق سفارشات پیش
چیف سیکریٹری سندھ سید ممتاز علی شاہ کی زیر صدارت  ٹرانسفارمنگ کراچی ان ٹو اے لائیو ایبل اینڈ کمپیوٹر میگا سٹی کے موضوع پر اربن پلاننگ کانفرنس منعقد ہوئی جس میں صوبائی وزیر بلدیات سید ناصر حسین شاہ، چیئرپرسن پلاننگ ناہید شاہ درانی، سینیئر میمبر بورڈ آف ریونیو قاضی شاہد پرویز،  کمشنر کراچی افتخار علی شالوانی، معروف ماہرین تعمیرات اور اربن ٹاو ن پلانرز نے شرکت کی اورخیالات کا اظہار کیا کانفرنس میں ریوائیول آف گلوری آف کراچی انسداد تجاوزات، موثر پبلک ٹرانسپورٹ سسٹم بشمول کے سی آر (کراچی سرکلرریلوی) اور کراچی کے لئے ماسٹر پلان کی تیاری کے نکات پر شرکا نے اظہار خیال کیا
 چیف سیکریٹری سندھ نے شرکاکی کانفرنس میں شرکت کا خیرمقدم کرتے ہوئے حال اور مستقبل کے تقاضوں کے پیش نظر کراچی کی خوبصورتی اور انفراسٹرکچر ڈویلپمنٹ پلان کی تشکیل کی ضرورت پر زور دیا اور شرکا سے تجاویز وسفارشات طلب کیں سید ممتاز علی شاہ نے آگاہ کیا کے کابینہ کی وزارتی کمیٹی نے 2 اجلاس کئے ہیں اور کراچی کے ماسٹر پلان کے لئے سفارشات مرتب کی ہیں۔ انہونے کہا کے کراچی کے شہریوں کے لئے حکومت سندھ ایک بہت بڑا منصوبا “کراچی واٹر اینڈ سیوریج سروسز امپروومینٹ پراجیکٹ” کر رہی ہے  جس کے تحت کراچی کے شہریوں کو 24 گھنٹے پانی مل سکے گا۔ انہونے کہا کے یہ منصوبا ورلڈ بینک کی تعاون سے کیا جا رہا ہے جس کے 4 فیز ہونگے اور پہلے فیز میں 100 ملین ڈالر کی لاگت آئے گی۔ چیف سیکریٹری سندھ نے کانفرنس کے شرکاء کو یقین دلایا کے حکومت سندھ شہر کی ہیریٹیج عمارتوں کی بحالی اور محفوظ بنانے کے لئے فنڈز فراہم کرے گی۔ چیف سیکریٹری سندھ سید ممتاز علی شاہ نے مزید کہا کے کراچی کی ترقی کے لئے ورڈ بینک کی مدد سے 300 ارب روپے کے ترقیاتی منصوبوں پر جلد کام کیا جائے گا۔ جس میں کے ایم سی، ڈی ایم سی اور ضلعی حکومت کو بھی شامل کیا جائے گا۔ اجلاس میں صوبائی وزیر بلدیات سید ناصر حسین شاہ نے کہا کے صوبائی حکومت سول سوسائٹی کی مدد اور تعاون سے کراچی کو خوبصورت بنائے گی۔ انہونے مزید کہا کے ماسٹر پلان کے متعلق سول سوسائٹی اور ماہرین کی تجاویز کو مدنظر کھا جائے گا۔ انہونے مزید کہا کے شہر کی دیگر لینڈ اونگ ایجنسیوں کو بھی ماسٹر پلان پر عملدرآمد کا کہا جائے گا۔
کانفرنس کے شرکاء نے مختلف تجاویز پیش کی جن میں کراچی کے ماسٹر پلان کو “2047 اور آگے”کا نام دیا جائے، شہر میں ایک کراچی کی تاریخ کا میوزیم بنایا جائے، شہر کی تاریخی عمارتوں کی بحالی اور محفوظ رکھنے اور  کراچی کے پارکوں کی بحالی، پراپرٹی ٹیکس، سرکیولر ریلوی اور واٹر بورڈ کے متعلق اہم تجاویز پیش کی گئی۔ کانفرنس میں چیئرپرسن پلاننگ اینڈ ڈویلپمنٹ ناہید شاہ درانی اور کمشنر کراچی افتخار شالوانی نے شہر میں ترقیاتی منصوبوں کے متعلق پریزنٹیشن اور مختلف تصاویر اور وڈیوز بھی دکھائے۔چیف سیکریٹری سندھ نے کہا کہ کراچی کی عظمت رفتہ کی بحالی کے لئے تمام طبقات کو اپنا موثر کردار ادا کرنا چاہیے انہوں نے کہا کہ اپ سب کے مشورے سے موثر اور قابل عمل ماسٹر پلان کی جلد تشکیل اور اس پر عمل درآمد کے موثر نتائج برآمد ہوں گے کانفرنس میں چیئرمین سائبان تسنیم صدیقی ،محترمہ یاسمین لاری، محترمہ شہربانو اور وائس ایڈمرل عارف اللہ حسینی، ڈاکٹر شیرعلی ،پروفیسر انیلہ نعیم ،سیکریٹری پلاننگ ڈاکٹر شیریں مصطفی، کمشنر کراچی افتخار شلوانی ڈی جی کے ڈی اے سید منصور عباس رضوی سیکرٹری بلدیات عارف حیدر شاہ ایم ڈی کے ڈبلیو ایس بی اسداللہ خان اور ڈائریکٹر جنرل اربن پالیسی اینڈ اسٹریٹیجک پلاننگ سندھ فیصل عقیلی نے بھی شرکت کی

اپنا تبصرہ بھیجیں