وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے کراچی کی ضلعی انتظامیہ کو ہدایت کی کہ وہ جاری صفائی مہم پر کام کی رفتار کو تیز کریں اور اسے موثر اور فعال بنانے کے حوالے سے اپنی تجاویز پیش کریں

کراچی(9اکتوبر 2019ء): وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے کراچی  کی ضلعی انتظامیہ کو ہدایت کی کہ وہ  جاری صفائی مہم  پر کام کی رفتار کو تیز کریں اور  اسے موثر اور فعال بنانے کے حوالے سے اپنی تجاویز  پیش کریں  نہیں تو  یہ تمام ایکسرسائز  فیل ہوجائے گی، جیسا کہ تاثر  پیدا ہورہاہے۔ انہوں نے یہ آج وزیراعلیٰ ہائوس میں  جاری کچرا اٹھانے  کی مہم  کے حوالےسے منعقدہ اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کہی ۔ اجلاس میں چیف سیکریٹری سید ممتاز علی شاہ، کلین کراچی مہم کے کام کی نگرانی کے لیے مقرر صوبائی وزراء، مشیر و معاون خصوصی ، سیکریٹری بلدیات روشن شیخ، کمشنر کراچی افتخار شلوانی، ایم ڈی سندھ سالڈ ویسٹ مینجمنٹ اتھارتی آصف اکرام، ایم ڈی واٹر بورڈ اسداللہ خان ، تمام چھ ڈپٹی کمشنرز و دیگر نے شرکت کی۔وزیراعلیٰ سندھ  کو بتایاگیاکہ 21 ستمبر تا 8 اکتوبر 2019 تک مجموعی طورپر 450896.51 کچرا ڈپٹی کمشنر  ز اور سالڈ ویسٹ مینجمنٹ نے  اٹھایا ہے ، صرف سالڈ ویسٹ مینجمنٹ نے 205805.51 ٹن  کچرا  عارضی جی ٹی ایس  سے اٹھایا ہے اور اسے لینڈ فل سائٹس تک پہنچایاہے۔ڈپٹی کمشنر سینٹرل نے  تقریباً تمام پڑے ہوئے  کچرے کو  صاف کردیاہے۔وزیراعلیٰ سندھ نے  ڈی سی سینٹرل کو ہدایت کی  کہ وہ مناسب پوائنٹس تلاش کریں  جہاں پر ڈسٹ بن تعمیر کی جاسکیں ۔ ڈپٹی کمشنر ملیر نے کہا کہ  انہوں نے اپنے علاقے سے تقریباً 75 فیصد کچرا اٹھا دیا ہے  اور انہوں نے  اپنی  مہم کو جاری رکھاہوا ہے ۔انہوں نے کہا کہ  انہوں نے چند ڈسٹ بن بھی تعمیر کرائی ہیں مگر اس کے باوجود لوگ  اپنا کچرا سڑکوں پر پھینکنے کو ترجیح دیتے ہیں ۔ وزیراعلیٰ سندھ نے  ان کی کچرا اٹھانے کے کام کےساتھ درخت لگانے  کے کام کوسراہا۔ ڈی سی شرقی نے اپنی رپورٹ میں  کہا کہ  ان کے تمام  ضلعے کو صاف کردیاگیاہے  اور کچھ جگہوں پر علاقے میں  نیا کچرا پھینکا گیاہے۔  اس پر وزیراعلیٰ سندھ نے  ان سے کہا کہ وہ اپنی ڈی ایم سی کو فعال  کریں  اور سندھ سالڈ ویسٹ مینجمنٹ اتھارٹی  کی کارکردگی کو  مانیٹر کریں ۔انہوں نے کہا کہ  یہ متعلقہ ڈی ایم سی کا فرض بنتاہے کہ وہ ایس ایس ڈبلیو ایم اے  کی جانب سے مناسب صفائی  کے کام کو یقینی بنائے۔ ڈی سی ملیر نے کہا کہ  ان کا ضلع کچرا پھینکنے کے حوالے سے  بہت زیادہ  خراب ہے مگر ان کی  انتھک کوششوں سے انہوں نے  بھینس کالونی کی مین سڑک ، ملیر 15 اور دیہی علاقوں کو صاف کیاہے۔وزیراعلیٰ سندھ نے ڈی سی ملیر کو ہدایت کی کہ وہ بھینس کالونی کی مین سڑک کے ساتھ  درخت لگانا شروع کریں  اور اپنے ضلع میں واقع پُلو ں کی دھلائی کا کام بھی شروع کریں ۔انہوں نے کہا کہ میں  سڑکوں کے ساتھ کچرا اور مٹی کو دیکھنا نہیں چاہتا ۔ مراد علی شاہ نے صوبائی وزیر کچی آبادی مرتضیٰ بلوچ کو ہدایت کی کہ وہ  ذاتی طورپر صفائی کے کام کی نگرانی کریں اور ڈی ایم سی ملیر اور کراچی ڈسٹرکٹ کونسل  کو بھی اپنے ساتھ شامل کریں ۔ڈی سی سائوتھ نے کہا کہ ان کے ضلع میں  بھی زیادہ تر صفائی ہوچکی ہے مگر چند دکانداروں اور  بوٹ بیسن  پرفوڈ اسٹریٹ اور دیگر علاقوں میں  کچرا سڑکوں پر پھینک دیاجاتاہےجب وہ اپنی دکانیں رات کو بند کرتے ہیں ۔ وزیراعلیٰ سندھ نے  کمشنر کو واضح ہدایت دیتے ہوئے کہا کہ وہ تمام بلڈرز کو مطلع کردیں کہ وہ اپنا ملبہ اپنے ذرائع سے ہٹا دیں ۔ انہوں نے کہا کہ  وہ جو انکارکریں یا نہ اٹھائیں تو اُن کی عمارتوں کو سیل کردیا جائے اوراُن کے تعمیراتی کام کو روک دیاجائے ۔ مراد علی شاہ نے ڈپٹی کمشنرز  کو ہدایت کی کہ وہ  ہر ایک دکاندار  کو اپنی دکان کے گیٹ کے سامنے ڈسٹ بن رکھنے کا پابند بنائیں جہاں  پر وہ اور ان کے  کسٹمرز اپنا کچرا ڈالیں۔ انہوں نے کہا کہ  میں آپ کو ہدایت کرتا ہوں کہ آپ  کچرا پھینکنے کے حوالے سے خلاف ورزی کے  مرتکب افراد کے  خلاف جرمانے عائد کرنا شروع کردیں ۔ صوبائی وزیرنے واضح کیا کہ چند سڑکوں جہاں پر  گڑھے پڑے ہوئے ہیں اور گٹر اُبلنے  کے باعث  صفائی دیکھنے میں نظر نہیں آرہی ہے حالانکہ اس علاقے سے کچرا اٹھادیاگیاہے، اس پر وزیراعلیٰ سندھ نے ایم ڈی واٹر بورڈ کو ہدایت کی کہ وہ اپنے سیوریج کے نظام  کو بہتر بنانے کا کام شروع کریں ۔ انہوں نے کہا کہ پہلے آپ اپنی سیوریج کی لائنوں کو بہتر کریں اور اس کے بعد  میں سڑکوں کی تعمیر کا کام شروع کروں گا۔ وزیر اعلیٰ سندھ نے صوبائی وزیربلدیات کو ہدایت کی کہ وہ  واٹر بورڈ کو ہدایت کریں کہ وہ سیوریج کے نظام  کی اوور ہالنگ کا  ایک تفصیلی  منصوبہ تیار کرکے انہیں آئندہ اجلاس میں پیش کریں ۔  عبدالرشید چنا میڈیا کنسلٹنٹ ، وزیراعلیٰ سندھ

اپنا تبصرہ بھیجیں