مولانا فضل الرحمان آزادی مارچ کا آغاز کراچی سے کریں گے

جمعیت علمائے اسلام (ف)کے سربراہ مولانا فضل الرحمان پشاور کی بجائے کراچی سے آزادی مارچ کا آغاز کریں گے  (ف)کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کے حکومت مخالف آزادی مارچ کا روٹ کراچی سے اسلام آباد ہوگا۔ مولانا روشنیوں کے شہر کراچی سے27 اکتوبر کو مارچ کا آغاز کریں گے اور آزادی مارچ کا پہلا پڑاؤ حیدرآباد ہو گا،جہاں ہٹڑی بائی پاس مرکز ہوگا۔ یہاں تھر پارکر، میرپورخاص اور عمر کوٹ سے بھی قافلے پہنچے گے،اس کے علاوہ بدین، سجاول، ٹھٹہ،جامشورو، ٹنڈومحمد خان اور ٹنڈوالہ یار سے بھی قافلے ہٹڑی بائی پاس پرمرکزی مارچ میں آ ملیں گے جبکہ اسی مقام پر آزادی مارچ کے شرکا کی کھانے سے تواضع کی جائے گی۔بعد ازاں آزادی مارچ ہٹڑی بائی پاس سے سکھر پہنچے گا اور گھوٹکی سے ہوتا ہوا وفاقی دارلحکومت اسلام آباد کی راہ لے گا۔حیدرآباد اور میرپور خاص سمیت مختلف اضلاع میں 500 کے قریب رجسٹرڈ مدارس ہیں جن میں آزادی مارچ کے لیے چندہ مہم بھی شروع کر دی گئی ہے۔دوسری جانب 500 بسوں کی بکنگ کے لیے بھی بات چیت جاری ہے۔ آزادی مارچ کا لمبا سفر طے کرنے اور ڈی چوک اسلام آباد میں شرکا سے مولانا کے خطاب کے لیےخصوصی کنٹینر بھی تیار کیا گیا ہے۔ خیبرپختونخوا کی بجائے کراچی سے آزادی مارچ کے آغاز کا فیصلہ پی ٹی آئی مخالف اور مولانا کو اخلاقی حمایت کی یقین دہانی کرانے والی پیپلز پارٹی کی وجہ سے کیا گیا ہے کیونکہ پیپلزپارٹی نے آزادی مارچ کی راہ میں کسی قسم کی رکاوٹ حائل نہ کرنے کی یقین دہانی کرا رکھی ہے جبکہ خیبرپختون خوا اور پنجاب سے اسلام آباد میں داخلے پر مارچ کے شرکا کو سخت مزاحمت کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں