عاشورہ محرم کے دوران کراچی واٹر بورڈ کے انتظامات قابل ستائش رہے

کراچی واٹر اینڈ سیوریج بورڈ یوں تو سارا سال ہی شہریوں کی خدمت پر مامور رہتا ہے اور اس کی انتظامیہ اور عملہ  سال کے 365 دن چوبیس گھنٹے شہریوں کو بلاتاخیر پانی کی فراہمی یقینی بنانے اور نکاسی آب کے مسائل حل کرنے کے حوالے سے سرگرم عمل نظر آتے ہیں اور اتنے بڑے کاسموپولیٹن شہر اور دنیا کے جو علی ملکوں سے بڑے آبادی والے شہر کی ضروریات اور مسائل کو حل کرنے پر توجہ مرکوز رکھنے والا ادارہ کراچی واٹر اینڈ سیوریج بورڈ یقینی طور پر کوئی معمولی خدمت انجام نہیں دے رہا بلکہ عبادت اور نیکی کمانے والا فریضہ ادا کر رہا ہے۔

بالخصوص عاشورہ محرم کے دوران کراچی واٹر اینڈ سیوریج بورڈ کی انتظامیہ اور عملے نے جس مستعدی سے شاندار انتظامات کیے اس پر ایم ڈی انجینئر اسداللہ خان اور ان کی پوری ٹیم قابل تعریف ہے اور مبارکباد کی حقدار ہے ایم ڈی اسداللہ خان نے اپنے ساتھیوں کے ہمراہ جس طرح خود مختلف ماتمی جلوسوں میں شرکت کی قیادت کی اور عملی اقدامات کو یقینی بنائے رکھا وہ خصوصی تعریف کے لائق ہے اللہ تعالیٰ انہیں اس کا اجر دے گا۔ یہ بات قابل ذکر ہے کہ اس مرتبہ عشق نامحرم سے قبل شہر میں خطرناک طوفانی بارشوں نے کافی منفی اثرات مرتب کئے تھے جن کی وجہ سے شہر کے مختلف علاقوں میں گلی محلے زیر آب آئے اور سڑکیں ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہونے کے بعد سیوریج کا پانی ان سڑکوں اور گلیوں پر بہتر ہے اور آج بھی کئی علاقوں اور محلوں اور گلیوں میں گٹر کا پانی اور کیچڑ نظر آتا ہے ایسی صورتحال کی وجہ سے کراچی واٹر اینڈ سیوریج بورڈ کے لئے گزشتہ برسوں کے مقابلے میں عاشورہ محرم میں پیش صورتحال زیادہ چیلنجنگ تصور کی جارہی تھی ماتمی جلوسوں کے راستوں سے گندے پانی کا اخراج صفائی اور ابلتے ہوئے گٹر اور کیچڑ کی صفائی آسان کام نہیں تھا لوگ سمجھ رہے تھے کہ اس مرتبہ بہت زیادہ مشکلات اور مسائل سامنے آئیں گے کراچی واٹر اینڈ سیوریج بورڈ کو بھی صورتحال کا ادراک تھا اس لئے تمام تر وسائل کو بروئے کار لاتے ہوئے درپیش مشکلات پر ہر ممکن حد تک قابو پانے اور مسائل کو حل کرنے کی بھرپور کوششیں کی گئیں جن پر لوگوں نے اقدامات کو تسلی بخش اور قابل تعریف قرار دیا۔

 

عاشورا محرم گزرجانے کے بعد دوسری طرف شہر کے وہ علاقے جہاں آج بھی بارش کے بعد ٹوٹی پھوٹی سڑکیں اور سیوریج کا پانی کھڑا نظر آتا ہے وہاں کے مکین اب انتظار کر رہے ہیں کہ عاشورہ محرم کی مصروفیات سے فارغ ہونے کے بعد بلدیاتی ادارے اور واٹر بورڈ کا عملہ سوسان علاقوں کی طرف توجہ دے گا ان علاقوں میں اردو بازار اور نارتھ کراچی کا سیکٹر فائیو بی ون اور دیگر علاقے خاص توجہ کے منتظر ہیں جہاں پر گلیوں میں سیوریج کا گندا پانی اور کیچڑ لوگوں بالخصوص نمازیوں کے لئے آنے جانے میں مشکلات کا باعث بنا ہوا ہے خواتین اور بچوں کا گھر سے باہر نکلنا دو بھر ہو گیا ہے سیوریج کا پانی اور کیچڑ کی علاقوں میں گلیوں میں مکانات کے دروازوں تک اس طرح موجود ہے کہنا گھر سے باہر آ سکتے ہیں نہ گھر کے اندر جا سکتے ہیں یہ صورتحال شہریوں کے لیے بہت تشویشناک پریشان کن ہیں مختلف علاقوں میں واٹر بورڈ کا عملہ کم ہے یا چند ملازمین چھٹیوں پر چلے جائیں تو باقی پورا علاقہ مسائل سے دوچار ہو جاتا ہے نیو کراچی کے علاقے میں لوگوں نے اپنی مدد آپ کے تحت پیسے جمع کرکے مقامی افراد سے مسائل کو حل کرنے کی کوشش کی لیکن اس کے باوجود مسائل جوں کے توں ہیں اور اب واٹربورڈ کے عملے اور افسران کی توجہ کا انتظار کیا جارہا ہے یہی صورتحال کراچی میں پاکستان کے سب سے بڑے اردو بازار کی ہے ۔شہر کے مختلف دور افتادہ علاقوں سے بھی اس طرح کی شکایت موصول ہورہی ہیں گنجان آباد علاقوں میں یہ مسائل زیادہ موجود ہیں۔

 

نارتھ کراچی سیکٹر  فائیو بی ون     North Karachi Sector 5-B-1

اردو بازار کراچی