انکھوں میں انسو أجاتے ہیں دل درد سے پھٹ جاتا ہے جب جب سیلاب میں گیھرے لوگوں کو دیکھتا ھوں۔ اپنے بچوں کو یہ بات بتاتے ھوے میں رو دیا۔ میرے بچوں نے فیصلہ کیا ھے ھم اب باہر کھانے پر نہیں جایں گے بلکہ یہ پیسے بھی سیلاب سے متاثرہ لوگوں کو دیں گے۔


انکھوں میں انسو أجاتے ہیں دل درد سے پھٹ جاتا ہے جب جب سیلاب میں گیھرے لوگوں کو دیکھتا ھوں۔ اپنے بچوں کو یہ بات بتاتے ھوے میں رو دیا۔ میرے بچوں نے فیصلہ کیا ھے ھم اب باہر کھانے پر نہیں جایں گے بلکہ یہ پیسے بھی سیلاب سے متاثرہ لوگوں کو دیں گے۔ ممتاز صنعت کار اور سماجی خدمات سر انجام دینے والی شخصیت

دیوان محمد یوسف فاروقی یہ بات بتاتے ہوے أبدیدہ ہو گے۔ ” بہت بڑی تباھی ھوئ ھے۔


غریب لوگ بھکے پیاسے بیٹھے ہیں ۔بیماریاں پھیل رھی ہیں ۔بچے مر رھے ہیں ” دیوان یوسف نے أنسو صاف کرتے ھوے کہا میں نے متاثرہ علاقوں میں 20 سے زیادہ امدادی کیمپ لگاے ہیں ۔ روز کھانے پکوا کر بھیجتا ھوے دوائون کے ٹرک بھجے ہیں یہ کام جاری رکھوں گا جب تک ہمت ھے۔ ان علاقوں میں بھی امدادی سامان بیھج رہا ھوں جہاں لوگ نہیں جا پا رھے۔ کشتیوں کے ذریعہ بھی۔ میں لوگوں سے اپیل کرون گا وہ جو کچھ دے سکتے ہیں ضرور دیں۔ اپنی تقریبات کا کھانا متاثرین کو بھیج دیں۔ أنے والے دو سال مشکل ترین ھوں گے معاشی طور پر ھم سب متاثر ھؤں گے۔ متاثرین کو


بچانے ان کی ابادکاری بہت مشکل کام ہے اگر ھم نے یہ نہ کیا تو الله ھمیں معاف نہیں کرے گا۔ زراعت تباہ ھو گی ہے سڑکیں راستے تباہ ھو گے ہیں ۔ھم غذای قلت کا شکار بھی ھو سکتے ہیں ۔ ھمیں تیار رہنا ھوگا ان سب مشکلات کا سامنا کرنے کے لیے۔

===============================


دیوان محمد یوسف فاروقی ایک پاکستانی تاجر اور سندھ کے سابق وزیر خزانہ ہیں جو یوسف دیوان کمپنیوں کے مالک ہیں وہ صوبائی وزیر بلدیات بھی رہ چکے ہیں۔ 1999 سے 2004 تک سندھ کی صنعت، محنت، ٹرانسپورٹ، کان اور معدنیات۔

سیاسی کیریئر
فاروقی صوبائی وزیر بلدیات تھے۔ مشرف دور میں 1999 سے 2003 تک سندھ کی صنعتیں، لیبر، ٹرانسپورٹ، کان اور معدنیات۔ مارچ 2005 میں انہیں اس وقت کے صدر پاکستان پرویز مشرف نے ستارہ امتیاز سے نوازا تھا۔

فاروقی کو 2007 میں سندھ میں نگراں سیٹ اپ میں صوبائی وزیر خزانہ بنایا گیا تھا۔
===================================