عمران خان کی حکومت نے بدترین سیاسی انتقامی کاروائیوں کا ایک سال مکمل کرلیا ۔ پیپلزپارٹی

کراچی :  وزیر اطلاعات و محنت سندھ سعید غنی نے وفاقی حکومت کے 1 سالہ کارکردگی کو اس ملک کی سب سے بدترین کارکردگی قرار دیتے ہوئے موجودہ حکومت کو نااہل اور نالائق حکومت قرار دیا ہے۔ تحریک انصاف کی حکومت نے ایک سال کے دوران ملکی معیشت کو تباہ و برباد کردیا ہے۔ سیاسی مخالفین کے خلاف انتقامی کاروائیاں شروع کی اور نیب کو حکومتی آلہء کار بنایا۔ عمران نیازی کی حکومت نے گذشتہ ایک سال کے دوران مہنگائی، بیروزگاری، عوام کا معیار زندگی، عوام کو بے گھر کرنے اور ملک کو تباہی کے داہنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی۔اگست 2018 کے مقابلے اگست 2019 میں ڈالر کی قیمت میں 35 روپے کا اضافہ جبکہ بجلی، گیس، پیٹرولیم مصنوعات، ادویات، کھانے پینے کی اشیاء کے ساتھ ساتھ عوام کی روزمرہ کی استعمال کی اشیاء کی قیمتوں میں کئی سو فیصد اضافہ ان کی کارکردگی کا منہ بولتا ثبوت ہے۔ نیازی حکومت میں میڈیا کو غیر اعلانیہ سینسرشپ کا سامنا ہے۔ عدلیہ کے خلاف سازشیں شروع کی۔ نیب کے چیئرمین کے خلاف ایک ویڈیو وائرل کرکے اسے بلیک میل جارہا ہے۔ وزراء اور مشیر اپنی حکومت کی کارکردگی کے بہتر ہونے کا راگ الاپ رہے ہیں۔ اتوار کے روز حکومتی1 سال مکمل ہونے پر جاری اپنے ایک بیان میں وزیر اطلاعات و محنت سندھ سعید غنی نے کہا ہے کہ عمران نیازی نے وزیر اعظم بننے سے قبل عوام کو 50 لاکھ گھر اور 1 کروڑ نوکریوں کا وعدہ کیا تھا۔ تاہم اس ایک سال کے دوران وہ عوام کو گھر اور نوکریاں تو دینے میں کامیاب نہیں ہوئے تاہم انہوں نے ہزاروں افراد کو بے گھر اور لاکھوں کو بیروزگار کردیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ عمران خان کی معاشی اور انتظامی پالیسیاں مکمل طور پر ناکام ہوچکی ہیں اور اس کی واضح دلیل گذشتہ برس کی رونیو کلیکشن میں ریکارڈ کمی ہے۔سعید غنی نے مزید کہا ہے کہ جس نئے پاکستان کا خواب نیازی حکومت نے عوام کو دکھایا اس میں صرف ان کی اپنی جماعت تو ضرور مستحکم ہورہی ہے لیکن اس کے مقابلے اس ملک میں بدترین معاشی بحران جنم لے چکا ہے۔ موجودہ حکمرانوں نے جہاں اس ملک کو بدترین معاشی بحران میں مبتلا کردیا ہے وہاں اس کا بوجھ عوام پر ڈالتے ہوئے اربوں روپے کے ٹیکسز عوام کے سر تھونپ دئیے ہیں، جس کے باعث یہ ملک معاشی طور پر نہ صرف غیر مستحکم ہوچکا ہے بلکہ اس ملک کی معیشت مکمل طور پر تباہی کے داہنے پر پہنچ چکی ہے۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت کی داخلہ اور خارجہ ناقص پالیسیوں کے منفی اثرات ہماری دیگر ممالک سے معاشی عدم استحکام کا باعث بن رہے ہیں۔ سعید غنی نے نیازی حکومت کو سخت تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا ہے کہ موجودہ نااہل حکومت اور ان کے سلیکٹیڈ وزیر اعظم کی پالیسیوں نے اس ملک کی اکثریت کو خط غربت کے نیچے دھکیل دیا ہے۔ آج اس ملک کا غریب عوام مکمل طور پر مہنگائی کی چکی میں پس رہا ہے تو دوسری جانب متوسط طبقہ بھی اپنی شناخت کھو رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ کسی بھی ملک میں سرمایہ داری ایک اہم جزو ہوتی ہے لیکن موجودہ نااہل حکومت کی ناقص پالیسیوں نے اس ملک میں سرمایہ داری کا گراف بہت حد تک نیچے گرا دیا ہے اور آئی ایم ایف اور دیگر ڈونرز ایجنسیوں سے لئے گئے قرضوں کے باعث بجلی، گیس، پیٹرولیم سمیت دیگر مصنوعات کی قیمتوں میں جس حد تک اضافہ ہوگیا ہے، اس نے غریب اور متوسط طبقے کے ساتھ ساتھ سرمایہ دار طبقے کی بھی کمر توڑ دی ہے۔ ان کی آئی ایم ایف کی شرائط ماننے کے باعث روپے کی قدر میں ڈالر کے مقابلے تاریخی کمی واقع ہوئی ہے اور روپے کی قدر میں اضافے کے لئے اس نے جو کمیٹی تشکیل دی وہ بھی روپے کی قدر میں کوئی اضافہ کرنے میں کامیاب نہیں ہوسکی اور آج اس کے اثرات عام عوام مہنگائی کی صورت میں بھگت رہے ہیں۔ ڈالر کے مقابلے روپے کی قیمت میں کمی کے باعث ہماری ایکسپورٹ مکمل طور پر تباہ حال ہے اور ہمارے صنعتکار کسی دوسرے ممالک میں اپنا کاروبار لے جانے کے لئے تیار ہوگئے ہیں۔ سعید غنی نے موجودہ وزیر اعظم اور ان کی نااہل اور نالائق کابینہ کو بھی شدید تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ ان کے ایک وزیر ایک بیان دیتا ہے تو دوسرا وزیر اسی کے بیان کی نفی کرکے اپنی حکومت کی کارکردگی کا خود پول کھول رہے ہیں۔