راجن پورشہر میں سیوریج اور سڑک کا منصوبہ کھٹائی میں پڑ گیا ٹھیکیدار ایڈوانس رقم لیکر غائب ہوگئے


راجن پورشہر میں سیوریج اور سڑک کا منصوبہ کھٹائی میں پڑ گیا ٹھیکیدار ایڈوانس رقم لیکر غائب ہوگئے منصوبے کی جگہ پرسیوریج کے پانی کے جوہڑ بن گئے دوکانداروں کو سامان کی سپلائی بند ہو جانے سے تاجر پریشان،آمدورفت کے راستے بند ہونے سے اہل علاقہ کی سرگرمیاں محدود ہو کر رہ گئیں ناقص پائپ لائن بچھانے پر بھی اہل علاقہ معترض، زیر تعمیر علاقہ محرم کے جلوسوں کی گذر گاہ ہےٹھیکیداروں کا کہنا ہے کہ 10 فیصد کمیشن سابق وزیر اعلی پنجاب عثمان بزدار کے بھائیوں کے دے چکے ہیں تفصیل کے مطابق ریلوے اسٹیشن تا درہ مچھی والا ضیاء شہید روڈ راجن پور کا بڑا کاروبار مرکز ہے جو زیر التواء سیوریج اور سڑک کے منصوبےکے باعث اہل علاقہ کیلئے وبال جان بن گیا ہے دونوں ٹھیکیدار پانچ پانچ کروڑ روپے ایڈوانس ادائیگی لینے کے بعد غائب ہوچکے ہیں سیوریج منصوبے کا کام انتہائی سست روی کا شکار ہے جبکہ سڑک کی تعمیر کا کا ابھی تک شروع نہیں ہو سکا حالانکہ ٹھیکیدار 5 کروڑ ایڈوانس لیکر بھی کام شروع نہیں کر تہا مزکورہ جگہ پر گہرے گڑھے آمدورفت میں رکاوٹ بن گئے ہیں جنرل بس اسٹینڈ پر جانے کا مین راستہ بند پڑا ہے اہل علاقہ کا کہنا ہے کہ سیوریج کے پانی کے جوہڑ مچھروں کی افزائش کا سبب بن چکے ہیں دوسرا اہم محرم الحرام کی آمد آمد ہے اور یہ راستے جلوسوں کی گزرگاہ ہیں اہل تشیع کے وفود ڈپٹی کمشنر راجن پور کو کئی بار ملاقات کر کے اپنے تحفظات کا اظہار کر رہے ہیں مقررہ وقت پر منصوبہ مکمل نہ ہوا تو بڑے پیمانے پر احتجاج شروع ہو جائے گا مزید برآں اہل علاقہ نے ناقص پائپ لائن بچھانے پر غم و گغصہ کا اظہار کیا ہے اور ڈپٹی کمشنر سے اس کا نوٹس لینے اور منصوبے کو فوری مکمل کرنے کامطالبہ کیا ہے۔
حسنین عباس سونترہ
ڈسٹرکٹ رپورٹر راجن پور