-جنرل مزمل درحقیقت وقت اور فنڈز ضائع کر رہے تھے۔ کے فور پراجیکٹ کراچی شہر کے لئے لائف لائن

جنرل مزمل کی واپڈا سے رخصتی کے بعد کراچی کے لیے K4 منصوبے کے مستقبل کے حوالے سے کئی شکوک و شبہات پیدا ہو گئے

تھے

بہت سے لوگ سوچ رہے تھے کہ کام مزید سست ہو جائے گا۔
اور پوائنٹ صفر سے دوبارہ، نئی ٹیم کو نیا آغاز کرنا ہوگا۔


اور یہ ان لوگوں کا زیادہ وقت اور فنڈز اور توانائی ضائع کرے گا جو طویل عرصے سے کام کر رہے ہیں۔
لیکن اب نئی کہانیاں اور حقائق منظر عام پر آ رہے ہیں کہ جنرل مزمل درحقیقت وقت اور فنڈز ضائع کر رہے تھے۔

اور اب نیب نے جنرل مزمل کو کرپشن کے بڑے الزامات کی انکوائری کے لیے بلایا ہے لیکن وہ نیب کے سامنے پیش نہیں ہو رہے اور یہ اطلاعات گردش کر رہی ہیں کہ وہ ملک چھوڑ چکے ہیں۔
دوسری جانب نئے وفاقی وزیر سید خورشید شاہ پانی سے متعلق تمام منصوبوں میں گہری دلچسپی لے رہے ہیں

اور انہوں نے اہم ہدایات جاری کر دی ہیں۔
=======================================================


واپڈا کی جانب سے گریٹر کراچی واٹر سپلائی اسکیم۔کے فور پراجیکٹ کے پہلے مرحلے کی تعمیرکیلئے 98 ارب 50کروڑ روپے مالیت کے تین مزید کنٹریکٹس ایوارڈ کر دیئے گئے۔ کے فور پراجیکٹ

کے پہلے مرحلے کی تکمیل سے کراچی شہر کو یومیہ 260ملین گیلن پینے کا پانی میسر آئے گا۔ کنٹریکٹ پر دستخط کرنے کی تقریب واپڈا میگا ہائیڈل کمپلیکس میں ہوئی،مہمانِ خصوصی وفاقی وزیر برائے آبی وسائل سید خورشید احمد شاہ تھے۔

چیئرمین واپڈا نوید اصغر چودھری بھی موجود تھے۔ واپڈا کی جانب سے جنرل منیجر (پراجیکٹس) عامر مغل اور کنٹریکٹ حاصل کرنے والی تعمیراتی کمپنیوں کے مجاز نمائندوں نے کنٹریکٹس کے مسودوں پر دستخط کئے۔ اِس موقع پر خورشید احمد شاہ نے کہا کہ کے فور پراجیکٹ کراچی شہر کے لئے لائف لائن کی حیثیت رکھتا ہے۔ جس سے شہر میں پینے کے پانی کی فراہمی کا اہم مسئلہ حل کرنے میں مدد ملے گی۔ اُنہوں نے منصوبے پر ہونے والی پیش رفت پر اطمینان کا اظہار کیا اور کہااُمید ہے کہ کے فور منصوبہ مقررہ مدت میں مکمل ہوگا۔

https://e.jang.com.pk/detail/150465
===========================================