انسداد دہشت گردی کی عدالت نے ملزم ماجد کو ڈکیٹی ، اقدام قتل، پولیس مقابلہ اور ناجائز اسلحہ کے کیس میں تین تین سال قید کی سزا سنادی


انسداد دہشت گردی کی عدالت نے ملزم ماجد کو ڈکیٹی ، اقدام قتل، پولیس مقابلہ اور ناجائز اسلحہ کے کیس میں تین تین سال قید کی سزا سنادی

ملزم ماجد کو سزا کے علاؤہ پندرہ ہزار روپے جرمانہ بھی ادا کرنے کا حکم جرمانہ ادائیگی نہ کرنے کی صورت میں مزید ایک ماہ قید بھگتنا ہوگی۔

ملزم حارث کو عدالت نے شک کا فایدہ دیتے ہوے بری کردیا۔
دونوں ملزمان پر ڈکیٹی کے دوران پولیس پر فائرنگ،اور ناجائز اسلحہ رکھنے کا الزام تھا۔


دونوں ملزمان کے خلاف تھانہ کورنگی انڈسٹریل پولیس نے مقدمہ الزام نمبر 1179/2020 زیر دفعہ 397/353/324/34 اور سیکشن 7ATA اور مقدمہ الزام نمبر 1180/2020 زیر دفعہ (1)23اے کے تحت درج تھا۔
ملزمان کے خلاف ڈکیٹی ،اقدام قتل، پولیس مقابلہ کا مقدمہ شہزاد خان نے درج کروایا تھا جبکہ ناجائز اسلحہ کا مقدمہ پولیس کی مدعیت میں درج تھا۔
مدعی مقدمہ شہزاد خان نے الزام لگایا کہ میں اور میری بیوی زہرہ پنجاب بینک کے سے ٹی ایم سے رقم نکال رہے تھے دو لڑکے آ ے ایک موٹر سائیکل سے اتر کر ہمارے پاس آ یا اسلحے کی زور پر ایک ہزار روپے چھین لیے ہم نے ڈاکو ڈاکو کا شور مچایا۔
اسی دوران پولیس کے چار جوان جو موٹر سائیکلوں پر گشت کررہے تھے انہوں نے ملزمان کو پکارنے لگے تو پولیس مقابلہ ہوگیا جس ملزم ماجد زخمی ہوگیا اور ملزم حارث موٹر سائیکل پر فرار ہوگیا۔


زخمی ملزم سے پولیس نے ہمارے سامنے لوٹی ہوئی رقم اور ناجائز اسلحہ برآمد کیا۔
فرد جرم عائد ہونے پر ملزمان نے صحت جرم سے انکار کیا ۔
پراسکیوشن نے ملزمان کے خلاف سات گواہان کو پیش کیا۔


دوران جرح تمام گواہوں کے بیانات میں تضاد پایا جاتاہے۔ لیاقت گبول ایڈووکیٹ
تفشیشی افسر نے جاے واردات سے کوی سی سی فوٹیج حاصل نہیں کی جبکہ جاے وقوعہ پر کیمرے لگے ہوے ہیں۔ لیاقت گبول ایڈووکیٹ
جاے وقوعہ پر 16 بینکوں کی برانچیں موجود ہیں اور کے ایف سی اور فیکٹریاں موجود ہیں۔ لیاقت گبول ایڈووکیٹ
===============================