آریان خان کیس میں ناقص تحقیقات کا الزام، سمیر وانکھیڑے کا چنئی تبادلہ

سابق اینٹی نارکوٹکس آفیسر سمیر وانکھیڑے کاممبئی کروز شپ ڈرگز کیس میں ناقص تحقیقات کے الزامات کے بعد چنئی تبادلہ کردیا گیا ہے۔

بھارتی میڈیا کی رپورٹ کے مطابق، سمیر وانکھیڑے کا چنئی میں تبادلہ ٹیکس دہندگان کی سروسز کے ڈائریکٹوریٹ جنرل کے طور پر کیا گیا ہے۔

بالی ووڈ اداکار شاہ رخ خان کے بیٹے آریان خان کی ممبئی کروز شپ ڈرگز کیس میں گرفتاری کے بعد سمیر وانکھیڑے کو اس کیس کی مزید تحقیقات کرنے سے روک دیا گیا تھا اور پھر آفیسر کو ڈائریکٹوریٹ جنرل آف اینالیٹکس اینڈ رسک مینجمنٹ ممبئی میں بھیج دیا گیا تھا۔

جبکہ شاہ رخ خان کے بیٹے کو بعد میں ضمانت پر رہا کر دیا گیا تھا اور اب کچھ روز قبل آریان خان کو اس کیس میں کلین چِٹ دے دی گئی ہے۔

مسٹر سمیر وانکھیڑے اُس وقت نارکوٹکس کنٹرول بیورو(این سی بی) کے ممبئی زونل چیف تھے، جب انہوں نے اپنی ٹیم کے ہمراہ گزشتہ سال شہر کے ساحل پر کروز شپ پر چھاپہ مارا تھا۔

ذرائع نے سمیر وانکھیڑے کے بارے گزشتہ ہفتے بتایا تھا کہ اُنہیں سرکاری ملازمت کے لیے مبینہ طور پر اپنی ذات کے حوالے سے جعلی سرٹیفکیٹ جمع کرانے کے لیے کارروائی کا سامنا کرنا پڑا ہے۔

وفاق نے وزارت خزانہ سے کہا ہے کہ مسٹر سمیر وانکھیڑے کے خلاف منشیات کے معاملے میں ان کی بطور این سی بی چیف ’ناقص تحقیقات‘ پر کارروائی کرے۔

ذرائع نے منشیات کیس کی تحقیقات میں سمیر وانکھیڑے کی جانب سے کی گئی پانچ بے ضابطگیوں کی نشاندہی کی ہے۔
ذرائع نے بتایا کہ سرچ آپریشن کے دوران کوئی ویڈیو گرافی نہیں کی گئی اور آریان خان کے فون کے مواد کا تجزیہ کرنے میں کوتاہی ہوئی، کیونکہ واٹس ایپ چیٹس ان کے کیس سےمتعلق نہیں تھیں۔

منشیات کے استعمال کو ثابت کرنے کے لیے آریان خان کا کوئی میڈیکل ٹیسٹ نہیں کروایا گیا اور کیس میں ایسے گواہوں کو شامل کیا گیا جوکہ کروز شپ پر چھاپہ مارتے وقت وہاں موجود ہی نہیں تھے۔

ذرائع کے مطابق اس کیس میں ایک اور سنگین غلطی یہ تھی کہ تمام ملزمان کو اکٹھا کیا گیا اور سب پر ایک جیسے الزامات لگائے گئے، یہاں تک کہ آریان خان کے پاس سے منشیات برآمد ہی نہیں ہوئیں پھر بھی گرفتار کرلیا گیا۔