ڈاکٹر مسرور سیال کی جانب سے ٹی وی ٹاک شو میں حملے کےخلاف سندھ اسمبلی نے منگل کو ایک متفقہ قرارداد مذمت منظور کرلی

کراچی (اسٹاف رپورٹر) کراچی پریس کلب کے صدر امتیاز فاران پر پاکستان تحریک انصاف کے ایک مقامی رہنما ڈاکٹر مسرور سیال کی جانب سے ٹی وی ٹاک شو میں حملے کےخلاف سندھ اسمبلی نے منگل کو ایک متفقہ قرارداد مذمت منظور کرلی۔اس قرارداد کو پیپلز پارٹی ، پی ٹی آئی، جی ڈی اے اور دیگر پارلیمانی گروپوں کی جانب سے پیش کیا گیا تھا۔

[embedyt]https://www.youtube.com/watch?v=3bgDy9yZWxY[/embedyt]

قبل ازیں اس واقعہ کے خلاف ایسوسی ایشن آف پارلیمانی جرنلٹس ( اے پی جے ) سندھ کی اپیل پرصحافیوں نے سخت احتجاج کیا اور سندھ اسمبلی کی پریس گیلری میں کئے جانے والے مظاہرہ کے دوران پی ٹی آئی کے خلاف سخت نعرے بازی کی۔سندھ اسمبلی کے قواعد کے مطابق بجٹ اجلاس کے دوران کوئی بھی قرارداد یا تحریک پیش نہیں کی جاسکتی تاہم اس سلسلے میں اسپیکر آغا سراج درانی نے اسمبلی قواعد میں نرمی کرتے ہوئے قرارداد پیش کرنے کی اجازت دی۔



قرارداد پر اظہار خیال کرتے ہوئے وزیر بلدیات سعید غنی نے کہا کہ اگر پی ٹی آئی قیادت وفاقی وزیر فواد چوہدری کی جانب سے شادی کی ایک تقریب میں ایک صحافی کے تھپڑ مارنے کا نوٹس لے لیتی اور انہیں سزا دیتی تو امتیاز فاران کے ساتھ یہ واقعہ نہیں ہوتا۔قرارداد کی حمایت میں جی ڈی اے کے نندکمار گوکلانی اور پی ٹی آئی کے جمال صدیقی بھی اظہار خیال کیا صحافیوں نے پریس گیلری میں امتیاز فاران کے ساتھ پیش آنے والے واقعہ پر شدید احتجاج نعرے بازی کی اور احتجاج کیا۔