سندھ میں گورنر راج کے بادل منڈلانے لگے

قومی احتساب بیورو کی جانب سے وزیراعلی سندھ سید مراد علی شاہ اور پیپلزپارٹی کے دیگر اہم مرکزی اور صوبائی رہنماؤں کے خلاف گھیرا تنگ ہونے لگا ہے سیاسی حلقوں میں سندھ حکومت کے مستقبل کے حوالے سے غیر یقینی صورت حال پر بحث جاری ہے نیب کے ہاتھوں وزیر اعلی سندھ سید مراد علی شاہ کی متوقع گرفتاری اور کابینہ کے خاتمے کے ساتھ ہی سندھ میں ایمرجنسی کے تحت گورنر راج لگائے جانے کی اطلاعات گردش کر رہی ہیں پیپلز پارٹی کے اقتدار کا سورج سندھ میں گیارہ سال کے بعد غروب ہونے کے قریب بتایا جارہا ہے.

[embedyt] https://www.youtube.com/watch?v=3bgDy9yZWxY[/embedyt]

سندھ کے صوبائی وزراء اور سرکاری افسران اس صورتحال پر سخت پریشان اور گم سم نظر آتے ہیں متبادل سیٹ میں بعض سیاسی نام اہم بتائے جا رہے ہیں ۔سیاسی مبصرین کے مطابق اگر صرف وزیراعلی اور کبھی نہ تبدیل ہوئی تو پھر سید ناصر شاہ اور گھوٹکی کے مہر خاندان میں سے نیا نام نئے وزیراعظم کے طور پر سامنے آ سکتا ہے اور اگر گورنر راج لگا نا مجبوری بنی تو پھر موجودہ گورنر کو بھی رخصت کیا جائے گا اور نئے گورنر کے لئے سابق وزیر اعلیٰ غلام رحیم کا نام بھی زیر غور ہے ۔