عمران خان کا اتحادی ایم کیو ایم کو مزید ایک وزارت، کراچی اور حیدرآباد پیکیج دینے کا فیصلہ

وفاقی حکومت نے بجٹ کی منظوری کے اہم موقع پر ایم کیوایم کو اتحادی کے طور پر برقرار رکھنے کے لیے مزید ایک وزارت دینے اور اس کے ساتھ ساتھ کراچی اور حیدر آباد کے لیے نیا پیکج لانے کا فیصلہ کیا ہے۔اس بات پر وزیراعظم عمران خان نے گورنر سندھ عمران اسماعیل اور وفاقی وزیر قانون ایم کیو ایم کے رہنما بیرسٹر فروغ نسیم سے وزیراعظم آفس میں ملاقات کے دوران تبادلہ خیال کیا۔

ذرائع کے مطابق فوری طور پر یہ فیصلہ نہیں ہوسکا کہ ایم کیو ایم کو مزید کون سی وزارت پیش کی جائے گی، وفاقی کابینہ میں پہلے ہی ایم  کیو ایم کے دو وزیر بیرسٹر فروغ نسیم اور خالد مقبول صدیقی شامل ہیں۔ وفاقی حکومت کو اپوزیشن کے دباؤ کی وجہ سے بجٹ کی منظوری کے حوالے سے چیلنجوں اور مشکلات کا سامنا ہے اپوزیشن نے نئے بجٹ کو آئی ایم ایف کا بجٹ قرار دے کر مسترد کر دیا ہے اور اس کے منظور کرنے کی راہ میں رکاوٹیں پیدا کرنے کا اعلان کیا ہے۔



اس سلسلے میں اپوزیشن جماعتوں کے اہم رہنماؤں کی ملاقاتیں اور مشاورت کا سلسلہ جاری ہے بی این پی کے اختر مینگل اور ایم کیو ایم کی قیادت پر سب کی نظریں ہیں اختر مینگل نے اپوزیشن کی آل پارٹیز کانفرنس میں شرکت کا فیصلہ کیا ہے، ایم کیوایم کے رہنماؤں نے بھی آصف زرداری کے پروڈکشن آرڈر جاری کرنے کے حوالے سے بیان دیا ہے ۔اس تناظر میں حکومت اپنی جوابی حکمت عملی وضع کر رہی ہے، وزیراعظم نے اپنے وزراء کو کہا ہے کہ وہ ٹینشن نہ لیں بجٹ ہر صورت منظور کرا لیا جائے گا۔