جی ڈی اے کے خلاف بیان دینے سے پہلے مرتضیٰ وہاب اپنی نااہل حکومت کی بدترین کارکردگی پر بھی لب کشائی فرما لیتے تو اچھا ہوتا، جی ڈی اے

کراچی ( اسٹاف رپورٹر ) گرینڈ ڈیموکریٹک الائنس ( جی ڈی اے) کے ارکان سندھ اسمبلی نصرت سحر عباسی، شہریار خان مہر اور نند کمار گوکلانی نے اپنے مشترکہ بیان میں وزیراعلیٰ سندھ کے مشیر مرتضیٰ وہاب کی جی ڈی اے کے خلاف ہرزہ سراہی پر ردعمل ظاہرکرتے ہوئے کہا ہے کہ ایک غیر منتخب مشیر کی کوئی جمہوری حیثیت نہیں ہے اس قسم کے بیان دینا انہیں زیب نہیں دیتا، رہنماؤں نے کہا کہ کاش جی ڈی اے کے خلاف بیان دینے سے پہلے مرتضیٰ وہاب اپنی نااہل حکومت کی بدترین کارکردگی پر بھی لب کشائی فرما لیتے تو کیا ہی اچھا ہوتا لیکن وہ بھی اپنے کرپٹ ٹولے کی کارستانیوں پر پردہ ڈالنے کی ناکام کوششوں میں مصروف رہتے ہیں،



انہوں نے کہا کہ پیپلزپارٹی کی حکومت عوام کے مسائل کے حل میں مکمل طور پر ناکام ہوچکی ہے جسکا خمیازہ سندھ کے عوام بھگت رہے ہیں پیپلزپارٹی کی کرپٹ قیادت اور نااہل حکومت کی کارکردگی یہ ہے کہ لاڑکانہ میں غریب عوام ایڈز جیسی مہلک بیماری کا شکار ہورہے ہیں پورے صوبے میں صحت عامہ کی ابتر صورتحال، امن وامان اور لاقانونیت کا بازار گرم ہے ترقیاتی کام ناپید ہیں یہ ہے آپکی حکومت کی گیارہ سالہ کارکردگی جسکی وجہ سے عوام کا جینا محال ہے۔ جی ڈی اے رہنماؤں کا کہنا تھا کہ اب آپکی حکومت کے چل چلاؤ کا وقت ہے آپکے آقا اور لاڑکانہ کی ملکہ قانون کی گرفت میں ہیں آپکے دیگر کرپٹ عناصر بھی قانون کی پکڑ میں آئینگے۔



پھر یہ وزارت رہیگی نہ مشیر کا عہدہ، آخر بکرے کی ماں کب تک خیر منائیگی ؟ رہنماؤں کا کہنا تھا کہ جی ڈی اے اجلاس میں جو بھی فیصلے کئے گئے وہ عوام کے تعاون سے انشاءاللہ پورے ہونگے عوام دشمن حکومت کی برطرفی کا فیصلہ قانون کی بالادستی کو مزید مستحکم کرنے کے لئے کیا گیا ہے کیونکہ بغیر احتساب جمہوریت نہیں چل سکتی اور آپکی کرپٹ حکومت کے ہوتے ہوئے احتساب کا عمل مکمل نہیں ہوسکتا۔ وہ وقت دور نہیں جب سندھ کے عوام کو غاصب ٹولے سے نجات ملے گی۔