67

عمر جیلانی … قابل فخر پاکستانی

8 ارب سے زائد نفوس کی ہماری پیاری دنیا میں ایک ارب سے زائد لوگ ایسے ہیں جنھیں پینے کے صاف اور محفوظ پانی تک رسائی حاصل نہیں جب کہ بھائی ارب سے زائد لوگ ایسے ہیں جنہیں سینی ٹیشن کی بنیادی سہولیات میسر نہیں ۔ترقی پذیر ملکوں میں یہ صورتحال اور بھی تشویشناک ہے ۔پاکستان میں پینے کے صاف پانی تک عام لوگوں کی رسائی کے لیے حکومتوں کو سخت چیلنج درپیش ہیں۔پاکستان دنیا کے ان ملکوں میں شامل ہے جہاں پینے کے پانی کا مسئلہ سر اٹھاتا جا رہا ہے آبی ذخائر کی کمی کے باعث بارشوں اور سیلاب سے آنے والا   




پانی ضائع ہو جاتا ہے اکثر علاقوں میں کم بارشیں ہونے کی وجہ سے زیر زمین پانی کی سطح بہت نیچے چلی گئی ہے ریگستان اور صحرا تو اپنی جگہ شہری آبادیوں میں بھی پینے کے پانی کے مسائل ہیں ۔وفاقی اور صوبائی حکومتوں نے گزشتہ دو دہائیوں میں پینے کے صاف پانی کی فراہمی کے لیے مختلف منصوبوں پر کام کیا ہے مزید منصوبوں پر کام جاری ہے۔



پاک ا وسز کمپنی ملک میں پینے کے صاف محفوظ پانی کی فراہمی کے منصوبوں پر بے تہاشہ کام کر رہی ہے ڈیڑھ ہزار سے زائد پروجیکٹ تیار کیے گئے تین ہزار سے زیادہ اعلی ترین تربیت اور ذہانت کے حامل انجینئرز اور تکنیکی عملے کی خدمات حاصل کی گئیں ہزارہا لوگوں کو روزگار کے نئے مواقع فراہم کئے گئے کراچی سے تھرپارکر تک کشمور سے عمرکوٹ تک ۔پینے کے صاف پانی کے گھروں پلانٹس لگائے گئے جنہیں شمسی توانائی سے چلانے کا اہتمام بھی کیا گیا مقامی سطح پر لوگوں کو روزگار کی فراہمی یقینی بنائی گئی انسانوں کے ساتھ ساتھ مویشیوں کے لئے بھی پینے کے پانی اور مقامی سطح پر سبزیاں اگانے کے لیے پانی فراہم کرنے کا انتظام کیا گیا۔



ان سب کامیابیوں اور شاندار کاموں کا سہرا پاک ا وسز کے سربراہ عمر جیلانی کے سر جاتا ہے جنہوں نے اپنے والد سابق وزیردفاع سابق چیف سیکرٹری سندھ سلیم عباس جیلانی کی تربیت اور تعلیمات کے مطابق اپنی کمپنی کو عوامی خدمات کے لئے وقف کر دیا اور پاکستان کے دور افتادہ اور پسماندہ علاقوں کی بہتری بھلائی اور خوشحالی کے لیے دن رات ایک کر کے پینے کے صاف اور محفوظ پانی کی فراہمی کو یقینی بنایا جسے برطانیہ کے ارکان نے پارلیمنٹ سمیت دنیا بھر کے ماہرین نے بہترین کاوش قرار دیتے ہوئے سراہا۔



پاک ا وسز کے سی او ا و ارشاد حسین بھی قابل تعریف اور قابل ستائش ہیں جنہوں نے عمر جیلانی کی ہدایات اور رہنمائی میں اس کمپنی کو دنیا کی بہترین واٹر کمپنی ثابت کیا انہوں نے اپنے انجینئرز اور تکنیکی عملے کی بہترین صلاحیتوں کو بروئے کار لاتے ہوئے مطلوبہ نتائج بندگی سے حاصل کیے اور ان کی کاوشوں اور محنت کے ثمرات پاکستان کے غریب اور پسماندہ علاقوں کے عوام تک پہنچانے میں کلیدی کردار ادا کیا ۔2005 میں قائم ہونے والی یہ کمپنی اپنے کاموں اور کامیابیوں کی بدولت دنیا بھر میں واٹر کمپنی کے طور پر بہترین نتائج فراہم کرنے والی کمپنی کا درجہ اختیار کر چکی ہے اور اسے نہ صرف پاکستان بلکہ عالمی سطح پر اہم پروجیکٹس کے لئے اوپن مقابلوں میں چنا گیا ہے اور متعدد بین الاقوامی ایوارڈز حاصل کرکے اس کمپنی نے اپنے بہترین ہونے کا ثبوت دنیا کے سامنے فراہم کیا ہے۔



لہذا یہ کہنا بے جا نہیں ہوگا کہ اس کمپنی کے روح رواں عمر جیلانی کے قابل فخر پاکستانی ہیں جن پر ہر پاکستانی کو فخر اور ناز ہونا چاہیے۔یہ اللہ کا لاکھ لاکھ شکر ہے کہ پاکستان میں عمر جیلانی اور ان کی ٹیم میں شامل ارشاد حسین اور دیگر انجینئرز اور ماہرین جیسے قابل فخر ثبوت پاکستان کو ملے ہیں جو اپنی پیشہ ورانہ صلاحیتوں ذہانت قابلیت تجربے اور تکنیکی مہارت کا بے مثال اور شاندار مظاہرہ کرکے دنیا بھر میں نہ صرف پاکستان کی نیک نامی کا باعث بن رہے ہیں بلکہ سبزہلالی پرچم سر بلند رکھے ہوئے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں