آصف زرداری کی جے آئی ٹی میں سامنے آنے والے سرکاری افسران سمیت دیگر اہم افراد کی گرفتاری جلد متوقع

سابق صدر آصف علی زرداری اور ان کی ہمشیرہ فریال تالپور کی نیب کے ہاتھوں باقاعدہ گرفتاری کے بعد یہ ایٹی میں سامنے آنے والے سرکاری افسران سمیت دیگر اہم افراد کی گرفتاری جلد متوقع ہے جے آئی ٹی میں مختلف سرکاری عہدوں پر فائز رہنے والے اہم سرکاری افسران کے نام سامنے آئے تھے جن پر مختلف پوزیشنوں پر رہتے ہوئے جعلی اکاؤنٹس اور منی لانڈرنگ کی مد میں سہولت کاری اور سرکاری خزانے کو نقصان پہنچانے کے الزامات ہیں۔



ان سرکاری افسران نے ذاتی طور پر مالی فائدے بھی اٹھائے اور سرکاری خزانے کو نقصان پہنچانے کے معاملات میں بھی ذمہ دار ٹھہرائے گئے ہیں سابق صدر آصف علی زرداری اور فریال تالپور کے گھریلو ملازمین سے لے کر او منی گروپ کے بعض افراد نے جے آئی ٹی کے سامنے اہم انکشافات کرتے ہوئے مختلف سرکاری افسران کے عہدے اور نام بتائے تھے اور ان سے رقم کے لین دین اور سرکاری کاغذات اور فائلوں کی بابت اہم معلومات جے آئی ٹی کو فراہم کی تھی جن کی روشنی میں تفتیش کو آگے بڑھانے میں مدد ملی اور اب مزید گرفتاریاں متوقع ہیں۔



گرفتاریوں کا سلسلہ پاکستان اور بیرون ملک تک پھیل سکتا ہے اومنی گروپ کے اہم ڈائریکٹرز اور ان کی خواتین پہلے ہی تفتیش کے مراحل سے گزر چکی ہیں کچھ کو ضمانت مل گئی تھی کچھ گرفتار ہیں آنے والے دنوں میں کراچی لاڑکانہ سمیت مختلف شہروں سے مزید گرفتاریوں کی توقع ہے بعض سرکاری ملازمین بیرون ملک جا چکے ہیں ان کے پاکستان میں موجود اثاثوں جائیداد اور قریبی رشتہ داروں کے گرد گھیرا تنگ کیا جا رہا ہے۔