زرداری ہاؤس اسلام آباد کے دروازے پر پیپلز پارٹی کی خواتین اراکین اسمبلی کا فریال تالپور کی حمایت میں اور حکومت کے خلاف احتجاجی مظاہرہ

حکومت نے سابق صدر آصف علی زرداری کی ہمشیرہ اور رکن سندھ اسمبلی پیپلز پارٹی کی رہنما فریال تالپور کو ایف ایٹ اسلام آباد میں واقع زرداری ہاؤس میں قید کر رکھا ہے اور زرداری ہاؤس کو سب جیل قرار دے کر ان لوگوں کا داخلہ بند کیا ہوا ہے زرداری ہاؤس کے گیٹ کے سامنے پاکستان پیپلز پارٹی کی خواتین اراکین اسمبلی نے فریال تالپور کی حمایت میں اور نیب اور وفاقی حکومت کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کیا۔



پولیس نے اراکین اسمبلی کو احتجاجی مظاہرہ کی اجازت دے دی احتجاجی مظاہرے کی شرکاء نے فریال تالپور اور پیپلز پارٹی کے حق میں جبکہ وزیراعظم عمران خان اور نیب کے خلاف نعرے بازی کی۔ پیپلز پارٹی کی خواتین اراکین اسمبلی کا موقف ہے کہ فریال تالپور کو سیاسی انتقامی کارروائی کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ سابق صدر آصف علی زرداری کی ہمشیرہ فریال تالپور 26 اپریل انیس سو اٹھاون کو پیدا ہوئیں انہوں نے پہلا الیکشن انیس سو ستانوے میں نوابشاہ سے لڑا جس میں وہ کامیاب نہیں ہوسکی تھیں سابق وزیر اعظم بینظیر بھٹو کے قتل کے بعد فریال تالپور نے لاڑکانہ سے ضمنی الیکشن میں حصہ لیا اور جیت کر پہلی مرتبہ 2008 میں قومی اسمبلی کی ممبر بنیں۔



سابق صدر جنرل پرویز مشرف کے دور حکومت میں وہ پیپلز پارٹی کی حمایت پر نوابشاہ کی میر ناظم اعلیٰ کے طور پر 2001 سے 2005 تک فرائض انجام دیتی رہیں اور دوبارہ 2005 سے 2009 کے لیے منتخب ہوئی لیکن اپنا دوسرا دور مکمل نہ کرسکیں اور 2008 میں اس عہدے سے دستبردار ہوگئیں فریال تالپور پیپلزپارٹی کے اہم ممبر منور تالپور کی اہلیہ ہیں۔