فواد چودھری نے سمیع ابراہیم کو تھپڑ مارنے کا پس منظر دوستوں کو بتا دیا

سمیع ابراہیم کو تھپڑ کا بیک گراؤنڈ یہ ہے کہ میں نے حکومتی اشتہارات کو اسٹریم لائن کیا اور رییٹنگز کے مطابق A,B, C اور D کیٹیگیز بنائیں اس تبدیلی سے حکومتی اشتہارات کے اخراجات میں 70 فیصد کمی آئی ۔اب چینلز میں دوڑ تھی کہ ہمیں A یا B کیٹیگری میں رکھیں۔ سمیع ابراہیم نے مجھے کہا کہ ہم نے آپ کیلئے بہت کیا ہے ہماری کیٹگری A کریں اور ساتھ ہی فوری طور پر دو کروڑ روپے کی Adjustments کریں۔ مسئلہ یہ تھا کہ اگر میں بول ٹی وی کو A کیٹیگری دیتا تو باقی سب چینلز کو بھی دینی پڑتی اور سارا عمل ہی ختم ہو جاتا۔ میرے انکار کے بعد ایک مستقل مہم میرے خلاف شروع کر دی گئ،



اسی دوران بول کے ایک سینئر رپورٹر کی درخواست مجھے آئی کہ بول ٹی وی اس کے واجبات ادا نہیں کر رہا، اس پر میں نے پیمرا کو کہا کہ اس معاملے پر غور کریں کہ ایک چینل اگر 40 ہزار بھی نہیں دے سکتا تو اسے بزنس کا کیا حق ہے؟ اس کے بعد اس مہم میں شدت آتی گئی۔  ہر معاملے کی کوئی حد ہوتی ہے،میں نے ہر جگہ درخواستیں دیں لیکن مجال ہے کسی کے سر پر جوں رینگی ہو۔ آج اس تقریب میں اس شخص سے آمنا سامنا ہوا تو پھر بکواس کی کوشش کی،  مجھے لگا کہ بےعزتی کی بھی کوئی حد ہے لہذاٰ میں نے ایک تھپڑ جڑ دیا۔ اب اس طرح کی بلیک میلنگ کا کیا حل ہے ایک تھپڑ کے علاوہ۔